اسد سپیکر‘ سوری ڈپٹی: پی ٹی آئی نے انتقال اقتدار کا پہلا معرکہ سر کرلیا


اسلام آباد(نیوزلائن)تحریک انصاف نے الیکشن 2018کے بعد انتقال اقتدار کا پہلا معرکہ سر کرلیا ہے ۔ خیبر پختونخواہ کے اسد قیصر قومی اسمبلی کے سپیکر اور بلوچستان کے قاسم سوری ڈپٹی سپیکر منتخب ہوگئے ہیں۔ دونوں کا انتخاب خفیہ رائے شماری سے ہوا۔ نیوزلائن کے مطابق سپیکر قومی اسمبلی کیلئے پی ٹی آئی کے اسد قیصر نے 176ووٹ حاصل کئے ، جبکہ خورشید شاہ کو 146ووٹ ملے ٗ 8ووٹ مسترد ہوئے، ڈپٹی سپیکر قاسم سوری کو 183 اور ان کے مدمقابل مولانا اسعد محمود کو 144 ووٹ ملے، ڈپٹی سپیکر کیلئے ٹوٹل 228 کاسٹ ہوئے ایک ووٹ مسترد ہوا ،پی ٹی آئی کے امیدوار اسد قیصر کے منتخب ہوتے ہی پاکستان مسلم لیگ (ن)نے شدید احتجاج کیا اور تحریک انصاف کے چیئر مین عمران خان کے سامنے آ کر جعلی مینڈیٹ ٗ جعلی مینڈیٹ ٗ ووٹ کو عزت دو ٗ ووٹ کو عزت دو کے نعرے لگائے ٗ شاہ محمود قریشی اور دیگر پی ٹی آئی ارکان لیگی ارکان کو بٹھانے کی کوشش کرتے رہے ٗ جواب میں پی ٹی آئی ارکان نے بھی نعرے لگائے تاہم پاکستان پیپلز پارٹی کے ارکان خاموش رہے ٗ شدید احتجاج کے بعد نئے سپیکر اسد قیصر کو اجلاس پندرہ منٹ کیلئے ملتوی کر نا پڑا ۔تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اپنے اپنے اراکین قومی اسمبلی کیساتھ اجلاس میں شریک ہوئے ٗ مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف اپنے بھائی نواز شریف کی احتساب عدالت میں پیشی کے باعث تاخیر سے اجلاس میں شریک ہوئے۔اجلاس سے قبل تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی، اسد قیصر کو اسپیکر کے عہدے پر کامیاب کروانے کیلئے لابنگ میں مصروف رہے اور انہوں ںے مختلف ارکان کی نشستوں پر جا کر ووٹ کی درخواست کی ۔

Related posts