امریکہ میں جنونی کی فائرنگ سے 50افراد ہلاک400زخمی

لاس ویگس(نیوزلائن)امریکی شہر لاس ویگس کےایک کنسرٹ میں ہونے والی فائرنگ میں کم از کم 50 افراد ہلاک اور 400 سے زیادہ زخمی ہوئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق چونسٹھ سالہ مسلح شخص سٹیفن پیڈک نے مینڈیلے بے ہوٹل کی 32ویں منزل سے باہر منعقد ہونے والے میوزک فیسٹیول میں شریک افراد پر فائرنگ کی تھی۔ پولیس نے تصدیق کی ہے کہ فائرنگ کرنے والا شخص ہلاک ہوگیا ہے۔ پولیس کے مطابق اب میریلو ڈینلے نامی اس خاتون کی تلاش ہے جو حملہ آور کے ساتھ سفر کر رہی تھی۔ پولیس حکام نے بتایا ہے کہ مسلح شخص نے مینڈیلے بے ہوٹل کی 32ویں منزل سے باہر منعقد ہونے والے میوزک فیسٹیول میں شریک افراد پر فائرنگ کی تھی۔ سوشل میڈیا پر جاری ہونے جانے والےی ویڈیوز اور تصاویر میں سینکڑوں افراد کو جائے وقوعہ سے بھاگتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ بعض کلپس میں بظاہر خودکار اسلحے سے فائرنگ کی آواز بھی سنی جا رہی ہے۔ براہ راست ٹی وی فوٹیج میں لاس ویگس کی پٹی پر مسلح پولیس کی موجودگی دیکھی جا رہی ہے۔ پولیس نے لوگوں سے اس علاقے سے دور رہنے کی اپیل کی ہے۔ اس فائرنگ میں ہلاکتوں کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔ ایک ہسپتال کے ترجمان نے سی این این کو بتایا ہے کہ کئی لوگوں کو ہسپتال میں داخل کیا گیا ہے جنھیں گولیاں لگی ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ایک مشتبہ شخص کو ‘مار گرا دیا گیا ہے’ جبکہ لاس ویگس سٹرپ پر ایک دوسرے واقعے کی بھی اطلاعات ہیں۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ سینکڑوں گولیاں چلی ہیں روٹ 19 ہاروسٹ فیسٹیول میں جائے واقعے کے بعض حصہ کو بند کر دیا گیا ہے اور وہاں مسلح پولیس موجود ہے۔ فائرنگ کا واقعہ مقامی وقت کے مطابق رات ساڑھے دس بجے ہوا ہے۔ عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ سینکڑوں گولیاں چلائی گئی ہیں۔ لوگوں کو جائے واقعہ سے افراتفری کے عالم میں بھاگتے دیکھا گيا ہے یہ واقعہ ابھی جاری ہے اور اسی دوران لاس ویگس کے میک کیرن ایئرپورٹ آنے والی کئی پرواز کو دوسری جانب موڑ دیا گیا ہے۔

Related posts

Leave a Comment