انجمن آڑھتیاں غلہ منڈی کا اجلاس عام ہلڑ بازی کی نذر


فیصل آباد(نیوزلائن)انجمن آڑھتیاں غلہ منڈی کا اجلاس عام ممبران کی ہلڑ بازی اور شور شرابے کی نذر ہو گیا۔ممبران میں ہاتھا پائی اور بد کلامی کے باعث اجلاس غیر معینہ مدت تک ملتوی کر دیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز غلہ منڈی کے سالانہ انتخابات کے انعقاد کے پیش نظر اجلاس عام بلایا گیا جو یونین رہنمائوں کے دوگروپوں کے درمیان ہلڑ بازی میں بدل گیا۔ اجلا س کی صدارت میاں آصف اسلم نے کی جس میں جنرل سیکر ٹری رانا ایوب اسلم منج، سر پرست اعلیٰ حافظ محمد یاسین، چوہدری مراتب علی، ملک محمد خالد، چوہدری ممتاز حسن، شیخ حنیف، رانا طیب خاں، ملک مجدد سلیمان، ملک محفوظ، بابر رحمانی،چوہدری اشرف وینس اور آڑھتیوں کی کثیر تعداد نے بھی شرکت کی۔اجلاس میں رانا ایوب اسلم منج نے سالانہ رپورٹ پیش کی اور صدر پنجاب امپورٹرز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن غلہ منڈی رانا محمد طیب خاں کے گروپ کے خلاف کرپشن اور یونین فنڈز کی خورد برد کے الزامات لگائے گئے جس پر دونوں گروپوں میں تلخ کلامی ہوئی اور نوبت ہاتھا پائی تک جا پہنچی۔اس موقع پر اجلاس ملتوی کرتے ہوئے معاملہ افہام و تفہیم سے حل کرنے کیلئے مذاکراتی کمیٹی تشکیل دے دی گئی۔صدر انجمن آڑھتیاں میاں آصف اسلم نے کہا کہ چند دنوں بعد ماحول ساز گار بنا کر دوبارہ اجلاس عام اور الیکشن کمیشن کا قیام عمل میں لایا جائے گا جومنڈی کے الیکشن کروائے گا۔صدر میاں آصف اسلم نے اجلاس منسوخ کرتے ہوئے دوبارہ اجلاس بلانے کا اعلان کر دیا ۔دریں اثناء صدر پنجاب امپورٹرز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن غلہ منڈی رانا محمد طیب خاں نے کہا ہے کہ غلہ منڈی کے ایک گروپ نے غیر متعلقہ افراد کو منڈی کے اجلاس عام میں بلوا کر جمہوری عمل کو سبوتاژ کرنے کی کوشش کی ہے ان کی اس حرکت سے ثابت ہو گیا ہے کہ وہ الیکشن سے راہ فرار اختیار کرنا چاہتے ہیں ۔ مگر اب انہیں میدان سے بھاگنے نہیں دیں گے ۔انہوں نے کہا کہ 17اگست 2017سے منڈی کی کابینہ کی مدت ختم ہو چکی ہے ۔موجودہ عہدیداروں نے اگر جمہوری عمل کے ذریعے الیکشن نہ کروا یا توعنقریب عدالت کے حکم پر ضلعی انتظامیہ الیکشن کروا دے گی اس لئے ان کی عزت اسی میں ہے کہ منڈی کے ممبران کی اکثریت کو مد نظر رکھ کر فوری طور پر الیکشن کروائیں ۔ انہوں نے کہا کہ ان کے گروپ پر کرپشن کے جھوٹے الزام لگا کر خود کو صاف ظاہر کر کے کوئی ممبران کو دھوکہ نہیں دے سکتا ۔آڑھتی ہمارے کردار سے واقف ہیں۔

Related posts