بجلی کا قومی نقصان کرنے کیلئے فیسکو حکام اورصنعتکاروں میں گٹھ جوڑ

فیصل آباد(ندیم جاوید)فیسکو حکام کی ملی بھگت سے فیصل آباد کی انڈسٹری منظور شدہ مقدار سے تین سو سے ایک ہزار فیصد زائدلوڈ انجوائے کررہی ہے۔اس دھوکہ دہی اور قومی فراڈ کے خلاف فیسکو حکام مکمل خاموشی اختیار کئے ہوئے ہیں اور صنعتکار مافیا کے خلاف کوئی ایکشن لینے کو تیار نہیں ہے۔تفصیل کے مطابق بجلی کے کنکشن کے حصول کیلئے ہر صارف کیلئے لازمی قرار دیا گیا ہے کہ وہ اپنی ضروریات ظاہر کر کے اپنے لئے ’ ’بجلی کا لوڈ‘‘منظور کروائے اور قانونی طور پر ہر صارف پابند ہے کہ اسی منظور شدہ لوڈ کے مطابق ہی بجلی کا استعمال کرے۔ فیسکو حکام کے مطابق 10سے 15فیصد زائد لوڈ استعمال کر بھی لیا جائے تو یہ قابل برداشت ہے۔ مگر فیصل آباد کی انڈسٹری قانونی طور پر منظور لوڈ سے کئی کئی گنا زائد لوڈ زائد استعمال کر رہی ہے۔ فیسکو ذرائع کے مطابق انڈسٹری مالکان نے قانونی پیچیدگیوں سے بچنے کیلئے انتہائی کم لوڈ منظور کروا رکھا ہوتا ہے جبکہ انکا استعمال انتہائی زائد ہے۔ بعض انڈسٹریل یونٹوں میں تو ایک ہزار فیصد سے بھی زائد لوڈ استعمال کیا جاتا ہے جو کہ انتہائی سنگین و قابل گرفت جرم اور قومی فراڈ ہے۔اس پر مذکورہ انڈسٹری کو بھاری جرمانہ ہو سکتا ہے جبکہ قانونی کارروائی اور کنکشن منقطع کرنے سمیت تمام آپشن استعمال کئے جاسکتے ہیں۔فیسکو اپنے قوانین کے مطابق زائد لوڈ استعمال کرنے پر جرمانہ ہی کردے تو اس کے ریونیو میں سالانہ چھے سے سات ارب روپے کا اضافہ ہو جائے گا۔ اس حوالے سے فیسکو حکام کا کہنا ہے کہ گورننگ بورڈ میں صنعتکاروں کی شمولیت اور ان کی مضبوط لابنگ انڈسٹری کیخلاف قانون کے مطابق کارروائی میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔جبکہ قانون کے مطابق کام کریں تو صنعتکاروں کی تنظیمیں بھی بلیک میلنگ کے حربے استعمال کرنا شروع کر دیتی ہیں ۔

Related posts

Leave a Comment