بم ڈسپوزل یونٹ کا حصہ بننے والی پہلی ایشیائی خاتون

پشاور(نیوز لائن)دہشت گردی سے متاثرہ صوبے خیبرپختونخوا کی پولیس اہلکار رافعہ بم ڈسپوزل یونٹ (بی ڈی یو) کا حصہ بننے والی پہلی پاکستانی اور ایشیائی خاتون بن گئیں ٗ7 سال قبل پولیس فورس جوائن کرنے والی 29 سالہ رافعہ بم ڈسپوزل یونٹ میں 15 روز کی ٹریننگ کے بعد باقاعدہ بم ڈسپوزل کا کام شروع کریں گی۔31 اہلکاروں کے ہمراہ خاتون اہلکار کو نوشہرہ کے اسکول آف ایکسپلوسیو ہینڈلنگ میں بموں کی اقسام، شناخت اور ناکارہ بنانے کے حوالے سے تربیت دی جائے گی۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے باہمت پولیس کانسٹیبل رافعہ نے کہا کہ جس دن وہ پولیس فورس جوائن کررہی تھیں اس دن بھی سیشن کورٹ کے نزدیک دھماکا ہوا تھا، اس دھماکے نے بھی ان کے حوصلے کو پست نہیں بلکہ بلند کیا اور اب انہیں اپنی ذمہ داریاں احسن طریقے سے سرانجام دیتے ہوئے 7 سال مکمل ہوگئے ہیں انہوں نے بتایا کہ میں نے یہ یونٹ اس لیے جوائن کیا کیونکہ آئے دن خیبر پختونخوا میں دہشت گردی کے واقعات رونما ہوتے رہتے ہیں اور پاکستان اور ایشیاء میں آج تک کسی خاتون کو رضاکارانہ طور پر بم ڈسپوزل اسکواڈ کا حصہ بنتے نہیں دیکھا گیا۔بم ڈسپوزل یونٹ کی پہلی خاتون رکن اور پولیس اہلکار رافعہ کے مطابق عورت چاہے تو اللہ کے فضل و کرم اور بزرگوں کی دعاؤں سے ہر مشکل کو آسان کرسکتی ہے۔رافعہ نے کہاکہ جس طرح اللہ نے انہیں اس فورس کی بدولت ملک میں عزت اور مقام عطا کیا ہے اس سے پوری دنیا انہیں پہچانتی ہے ٗان کی خواہش ہے کہ پاکستان اور پولیس فورس کا مثبت تاثر عملی طور پر پوری دنیا میں پہنچایا جاسکے۔خاتون اہلکار کا کہنا تھا کہ پاکستان صرف میرا ملک نہیں ہے بلکہ میرا گھر ہے، میری فیملی صرف ماں نہیں بلکہ پاکستان کی عوام میری فیملی ہے اور میں اپنی فیملی کے لیے قربانی دوں یہ نہ صرف میرے لیے بلکہ میری ماں کیلئے فخر کا مقام ہوگا۔

Related posts