مسلم لیگ ن میں دراڑیں مضبوط‘درجنوں رہنما چھوڑ کر جانے کو تیار

لاہور(نیوزلائن)پانامہ کیس کے منطقی انجام کی طرف بڑھنے کا سفر شروع ہوتے ہی مسلم لیگ ن میں دراڑیں بھی گہری سے گہری ہوتی جا رہی ہیں۔ مسلم لیگ ن کے درجنوں ارکان قومی و صوبائی اسمبلی اپنی پارٹی چھوڑ کر پی ٹی آئی اور پی پی پی میں جانے کو تیار بیٹھے اور رابطوں میں ہیں۔صوبائی وزیر عطا محمد مانیکا نے تو استعفیٰ دے بھی دیا ہے جبکہ مزید درجنوں ارکان استعفے تیار کئے بیٹھے ہیں۔نیوزلائن کے مطابق صوبائی وزیر عطا محمد مانیکا کافی عرصہ سے پارٹی قیادت سے ناراض تھے اور وہ ایک گروپ کے ساتھ پارٹی چھوڑنے کیلئے مناسب وقت کا انتظار کر رہے تھے۔جنوبی پنجاب سے 15ارکان صوبائی اسمبلی اور تین ارکان قومی اسمبلی ان کے ساتھ ہیں اور ان کے کسی بھی وقت مستعفی ہونے کا امکان ہے۔ریاض پیرزادہ بھی ایسے ہی کسی موقع کے انتظار میں ہیں اور ان کے پیپلز پارٹی سے کافی عرصہ سے رابطے ہیں امکان ہے کہ کسی بھی وقت مستعفی ہو کر وہ پی پی پی میں جا سکتے ہیں ان کے ساتھ بھی جنوبی پنجاب کے ارکان اسمبلی کا بڑا گروپ مسلم لیگ ن چھوڑ دیگا۔فیصل آباد میں سابق سپیکراور موجودہ ممبر پنجاب اسمبلی افضل ساہی اور ان کے بھائی ایم این اے کرنل غلام رسول ساہی بھی مسلم لیگ ن چھوڑ کر پی ٹی آئی میں جانے کو تیار بیٹھے ہیں۔جڑانوالہ سے رکن قومی اسمبلی عاصم نذیر اور ان کے بھائی چیئرمین ضلع کونسل زاہد نذیر بھی پی ٹی آئی سے رابطے میں ہیں اور آئندہ الیکشن وہ بھی ن لیگ کے ٹکٹ پر نہیں لڑیں گے۔رکن پنجاب اسمبلی رضا نصراللہ گھمن بھی مسلم لیگ ن کو خیرباد کہنے کیلئے تیار بیٹھے ہیں ان کے پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی دونوں سے رابطے ہیں اور کسی بھی وقت وہ جانے اعلان کر سکتے ہیں۔سمندری سے رکن پنجاب اسمبلی عارف گل بھی اگلا الیکشن پی ٹی آئی سے لڑنے کی تیاریوں میں ہیں۔فیصل آباد کا میئر رزاق ملک اور ان کا بھائی نواز ملک بھی مسلم لیگ ن چھوڑنے کا اعلان کر کے سیاسی حلقوں کو حیران کر سکتے ہیں۔گوجرانوالہ سے بھی تین ایم پی اے ن لیگ کو الوداع کہنے کی تیاریوں میں ہیں۔حافظ آباد سے ن لیگی ایم این اے اور وزیرمملکت سائرہ افضل تارڑ اور ان کے والد افضل تارڑ کے ن لیگ چھوڑنے کی خبر بھی کسی بھی وقت آسکتی ہے۔ ڈی جی خان کی کھوسہ فیملی تو کافی دیر سے مسلم لیگ ن سے کٹ چکی ہے مگر باضابطہ طور پر پارٹی چھوڑنے کا اعلان ان کا بھی بہت جلد متوقع ہے۔ جھنگ کی شیخ فیملی‘ غلام بی بی بھروانہ اور صائمہ اختر بھروانہ بھی کسی بھی وقت مسلم لیگ ن چھوڑ کر کسی دوسری جماعت کے ہم رقاب چلنے کو تیار بیٹھے ہیں ۔ان کے علاوہ بھی متعدد سیاسی شخصیات مسلم لیگ ن کا ساتھ ختم کو تیار بیٹھی اور اعلان کیلئے مناسب وقت اور سپریم کورٹ کے فیصلے کا انتظار کر رہی ہیں۔

Related posts

Leave a Comment