میرٹ سیاست تلے دفن : کالجوں میں سی ٹی آئیز کی سفارشی بھرتیاں


c1
لاہور (رانا حامد سے)پنجاب کے کالجوں میں ریگولر اساتذہ کی کمی پوری کرنے کیلئے بڑی تعداد میں سی ٹی آئیز بھرتی کی گئیں ہیں۔سی ٹی آئیز بھرتی کے عمل میں میرٹ کو نظر انداز کرنے‘ سفارشی بھرتیاں کرنیاور بعض کالجوں میں بوگس بھرتیاں کرنے کی شکایات سامنے آئی ہیں۔نیوز لائن کے مطابق سی ٹی آئیز کی بھرتی میں قواعد کو نظر انداز کرنے‘ میرٹ کے قتل عام اور حقدار طلبہ کو محروم رکھنے کی شکایات صوبہ بھر سے سامنے آئی ہیں تاہم بوائز کی نسبت گرلز کالجوں میں شکایات زیادہ سامنے آئی ہیں۔ ایسا کرنے میں مقامی ڈائریکٹرز کالجز کے ساتھ متعلقہ اداروں کی پرنسپلز بھی ملوث پائی گئی ہیں۔ذرائع کے مطابق جن کالجوں کے حوالے سے شکایات سامنے آئی ہیں ان میں گورنمنٹ اسلامیہ کالج برائے خواتین حافظ آباد‘ گورنمنٹ اسلامیہ کالج برائے خواتین فیصل آباد‘ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج سمن آباد فیصل آباد‘ گورنمنٹ کالج جڑانوالہ‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین جڑانوالہ‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین فاروق کالونی سرگودھا‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین سمن آباد لاہور‘ خواجہ فرید گورنمنٹ کالج رحیم یار خان‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین رحیم یار خان‘ گارڈن کالج راولپنڈی‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین ماڈل ٹاؤن گوجرانوالہ‘ گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج جھنگ‘ گورنمنٹ کالج برائے خواتین ڈی جی خان سمیت صوبے کے دو سو سے زائد کالجز ہیں۔ نیوز لائن کے مطابق ان کالجز کے حوالے سے بڑی تعداد میں سفارش پر سی ٹی آئیز بھرتیاں کرنے کی شکایات سامنے آئیں مگر متعلقہ ڈائریکٹر متعلقہ حکام نے معاملے میں بڑے افسران اور سیاسی شخصیات کے ملوث ہونے کی وجہ معاملے کو ٹھپ کر دیا۔

Related posts