پانامہ کیس ‘نوازشریف کیخلاف ثبوت گھر کے بھیدی نے دئیے

اسلام آباد(حامد یٰسین)میاں نواز شریف کو پانامہ کیس میں پھنسانے والا کوئی باہر سے نہیں آیا بلکہ لنکا ان کے اپنے ہی گھر سے ڈھائی گئی ہے۔پانامہ کیس کے تمام دستاویزی ثبوت خود ان کی فیملی کے ایک رکن نے فراہم کئے ۔ ایک ’’شریف زادے‘‘ کے فراہم کردہ ثبوتوں دستاویزات‘ کاغذات و دیگر مواد کی تحقیق ہوئی تو پانامہ جیسا ہنگامہ کھڑا ہوا جو میاں نواز شریف کی جان چھوڑنے میں نہیں آرہا۔ثبوت فراہم کرنے والے ’’شریف زادے ‘‘ نے ایک ’’چوہدری ‘‘کی مدد سے تمام کھڑاک کھڑا کیا اور ایک تیر سے کئی شکار کرنے کی کوشش کی۔ذرائع کے مطابق میاں نواز شریف اور اس کی فیملی کیخلاف ثبوت فراہم کرنے والے ’’شریف‘‘ نے نہ صرف خاندانی معاملات پر اپنی پوزیشن مضبوط کرنے کی کوشش کی بلکہ مسلم لیگ ن کی قیادت اور حکومتی معاملات بھی اپنے ہاتھ میں لینے کی کوشش کی ہے۔پاکستان کے ایک معروف صحافی جے آئی ٹی بننے سے بھی کئی ہفتے پہلے پانامہ ایشو کی حقیقت سے پردہ اٹھا چکے ہیں اور انہوں نے ہی یہ انکشاف کیا تھا کہ پانامہ میاں نواز شریف کیخلاف سازش ہے اور اس سازش میں میاں نواز شریف کے انتہائی قریبی ایک ’’شریف‘‘ نے شریک کا کردار ادا کیا ہے ۔ایک انتہائی اہم وفاقی وزارت پر براجمان ایک ’’چوہدری‘‘ نے گھر کے بھیدی کے طور پر لنکا ڈھانے والے اس ’’شریف‘‘ کا بھرپور ساتھ دیا۔ پانامہ ایشو ان کی فراہم کردی دستاویزات سے ہی شروع ہوا جس میں ایک اہم خفیہ ادارے نے بھی کردار ادا کیا اور عالمی سطح پر معاملے کو اچھالنے میں بھی اس ادارے کا کردار تھا جبکہ نواز شریف کے علاوہ باقی عالمی اور مقامی شخصیات بارے مواد بھی اسی ادارے نے اکٹھا کیا۔ نواز شریف کے خلاف تمام مواد اس لنکا ڈھانے والے ’’شریف‘‘ بھیدی نے ہی فراہم کیا۔ ذرائع کے مطابق میاں نواز شریف اور ان کے اقارب اس صورتحال سے آگاہ ہیں۔ پانامہ ایشو سامنے آنے پر شریف فیملی میں ایک گھمسان کی ’’جنگ‘‘ اور کھینچا تانی بھی ہوئی جس پر بعد ازاں میاں نواز شریف نے اندرون خانہ ’’فیملی سفارتی‘‘ کوششوں سے قابو پایا تاہم دلوں میں اب بھی کدورتیں موجود ہیں۔ شیشے میں آنے والے اس بال کو ابھی تک ختم نہیں کیا جا سکا اور سرد جنگ ہنوز جاری ہے۔

Related posts

Leave a Comment