پرائیویٹ کمپنیز کرپشن: شہباز شریف نیب انکوائری سے پریشان


لاہور (نیوزلائن) پنجاب حکومت کے زیرکنٹرول چنے والی پرائیویٹ کمپنیوں کے غیرقانونی اقدامات اور کرپشن کیس میں نیب انکوائری نے سابق وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کو شدید پریشانی سے دوچار کررکھا ہے۔ سابق وزیر اعلیٰ اس معاملے سے اپنی جان چھڑانے اور انکوائری سے اپنا دامن بچانے کیلئے سرگرم ہیں جبکہ نیب میں پیش ہونے اور سوالات کے جواب دینے سے بھی گریزاں ہیں۔ نیوزلائن کے مطابق قومی احتساب بیورومیں پنجاب کمپنیز اسکینڈل کی جاری تحقیقات نے میاں شہباز شریف کو شدید پریشانی سے دوچار کررکھا ہے اور وہ ہر صورت اس معاملے سے اپنی جان بچانے کے چکر میں ہیں۔ نیب اس معاملے کی تحقیقات کررہا ہے اور متعدد مرتبہ میاں شہباز شریف کو بلا چکا ہے ۔ نیب نے سوموار کو بھی میاں کو طلب کیا تھا مگر سابق وزیراعلیٰ طلبی کے باوجود تفتیشی ٹیم کے روبرو پیش نہ ہوئے۔ قومی احتساب بیورو لاہور میں پنجاب پاور ڈویلپمنٹ کمپنی میں مبینہ بے ضابطگیوں کے حوالے سے بھی انکوائری کی جا رہی ہے، جس میں نیب نے سابق وزیر اعلی پنجاب شہباز شریف کو دوسری بار بیان ریکارڈ کرانے کیلئے طلب کیا تھا لیکن وہ پیش نہیں ہوئے ۔نیب ذرائع کے مطابق شہباز شریف کو پنجاب پاور ڈویلپمنٹ کمپنی کے سی ای او کی خلاف ضابطہ تقرری اور ٹھیکوں میں مبینہ بے ضابطگیوں پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے روبرو بیان ریکارڈ کرانے کیلئے طلب کیا گیا تھا۔اس سے قبل بھی شہبازشریف آشیانہ اقبال اور صاف پانی کمپنی کیس بھی میں نیب کے روبرو پیش ہو کر بیان ریکارڈ کرا چکے ہیں۔ذرائع کے مطابق میاں شہباز شریف کرپشن کے ان معاملات میں اپنی جان بچانے کیلئے ہر اقدام اٹھانے کیلئے تیار ہو چکے ہیں اور چاہتے ہیں کہ ان معاملات سے ان کی جان بچ جائے ۔ نیب باقی جس بھی اینگل سے انکوائری کرتا رہے بس ان کا نام شامل نہ کرے۔ دوسری جانب نیب ذرائع کا کہنا ہے کہ پرائیویٹ کمپنیز کرپشن کیس میں ہر معاملہ گھوم کر شہباز شریف کی جانب آجاتا ہے ۔ اس معاملے کی انکوائری کسی صورت ٹھپ نہیں ہو گی۔ معاملے کو منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا۔ میاں شہباز شریف ملوث ہوئے تو ان کے ساتھ بھی رعائت نہیں برتی جائے گی۔

Related posts