پنجاب حکومت کے ظلم کیخلاف جمشید دستی کی جیل میں بھوک ہڑتال



سرگودھا(نیوزلائن)پنجاب حکومت کے ظلم کیخلاف رکن قومی اسمبلی جمشید دستی نے جیل میں بھوک ہڑتال کر دی۔ ڈی جی خان جیل میں مظالم کے پہاڑ توڑنے کے بعد پنجاب حکومت نے جمشید دستی ایم این اے کو سرگودھا جیل منتقل کر دیا۔ جمشید دستی کا کہنا ہے کہ مجھے پورا سچ بولنے اور جاگیرداروں و سرمایہ داروں کے ظلم کیخلاف آواز اٹھانے کی سزا دی جا رہی ہے۔نیوزلائن کے مطابق رکن قومی اسمبلی جمشید دستی نے جیل اور پولیس حراست میں اپنے ساتھ رکھے جانیوالے پنجاب حکومت کے ناروا سلوک کیخلاف جیل میں بھوک ہڑتال کر رکھی ہے۔ایک ہفتہ ہوچکا ہے اور جمشید دستی بھوک ہڑتال ختم کرنے کو تیار نہیں ہیں۔ڈی جی خان جیل حکام نے اپنی ہر ممکن کوشش کر لی مگر جمشید دستی کی بھوک ہڑتال ختم نہ کروا سکے۔ حکام نے جیل میں اور پولیس حوالات میں رکن قومی اسمبلی کو تشدد کا نشانہ بھی بنایا جس کے بارے میں جمشید دستی کے قریبی حلقوں کا کہنا ہے کہ دستی کو ایسے تشدد کا نشانہ بنایا جا رہا ہے جیسے وہ بہت بڑا دہشت گرد اور تخریب کار ہو ۔ اس پر کسی ایسے جرم کا مقدمہ درج نہیں ہے جو کسی کی جان و مال کے نقصان کا باعث بنا ہو پنجاب حکومت نے ریاستی مشینری کا استعمال کر کے جھوٹے مقدمات درج کر رکھے ہیں۔ اپنے ساتھ رکھے جانیوالے سلوک کے حوالے سے جمشید دستی کا کہنا ہے کہ پنجاب حکومت نے انہیں سچ بولنے ‘ جاگیرداروں اور سرمایہ داروں کے خلاف آواز بلند کرنے اور حکومتی گماشتوں کی غلط کاریاں بے نقاب کرنے کی سزا دے رہی ہے مگر اس سب کچھ کے باوجود وہ سچ کی آواز بلند کرنے سے باز نہیں آئیں گے۔

Related posts