پنجاب پولیس’’ گلو بٹ‘‘ سے خوفزدہ‘ لاہور کے بعد فیصل آباد میں ثبوت مل گیا

فیصل آباد(نیوزلائن)پنجاب پولیس کے شیر جوان سرکار کے پالے ہوئے ’’گلو بٹ‘‘ سے شدید خوفزدہ اور سہمے ہوئے ہیں۔زرعی یونیورسٹی کے ’’گلو بٹوں‘‘ نے ڈیڑھ گھنٹے تک شہر کے حساس ایریا میں واقع یونیورسٹی چوک کو میدان جنگ بنائے رکھا۔ پنجاب پولیس کو مداخلت کی ہمت بھی نہ ہوئی۔ ایس ایچ او سول لائن اپنے علاقے میں ہونیوالی یکطرفہ ’’جنگ‘‘ رکوانے کی بجائے اپنے ساتھ لائے گنتی کے شیر جوانوں کو لئے ایک کونے میں دبکے رہے اور گاہے بگاہے گلوبٹوں کی امداد کیلئے میڈیا کے نمائندگان پکڑ کر ان کے حوالے کرتے رہے۔چوک میں ’’گلو بٹ‘‘ اپنا فن دکھانے اور میڈیا نمائندگان کی دھلائی کرنے اور میڈیا کی گاڑیوں کو سکریپ بنانے میں مگن تھے جبکہ صرف بیس قدم کے فاصلے پر واقع پولیس لائن سے پولیس کی نفری نکلنے میں دو گھنٹے لگ گئے۔سو گز دور آفس سے نکل کر چوک میں پہنچنے میں ایس ایس پی آپریشن کو اڑھائی گھنٹے سے زائد وقت لگا۔ آر پی او کا آفس بھی سو گز سے دور نہیں تھا مگر انہیں چوک تک آنے کی زحمت بھی گوارہ نہ ہوئی۔ سی پی او بھی پولیس کی بزدلی اور نااہلی کا مظاہرہ کی شرمندگی سے بچنے کیلئے میدان جنگ بنے چوک میں آنے سے ڈرتے رہے۔

Related posts