فیصل آبادپولیس کے شیرجوانوں نے قانون کو گھر کی لونڈی سمجھ لیا


فیصل آباد(نیوزلائن)فیصل آباد پولیس کے شیرجوانوں نے قانون کو گھر کی لونڈی سمجھ لیا۔تفتیش میں بے گناہ ثابت ہونیوالے شہری کو تھانیداروں نے مدعی کیساتھ ساز باز ہو کر گھر سے اٹھا لیا۔ عدالت کا جعلی ریمانڈ پیپر بنا کر کئی روز تک غیرقانونی حراست میں رکھے رکھا۔ انکوائری میں پولیس کی کارروائی غیرقانونی اور عدالتی ریمانڈ پیپر بوگس ثابت ہو گیا۔ نیوزلائن کے مطابق ماجد حسین شاہ نامی شہری نے اعلیٰ پولیس حکام کو دی گئی درخواست میں مؤقف اختیار کیا ہے کہ اس کے خلاف اکرام نامی شخص نے جھوٹا مقدمہ درج کروایا تھا جس کی تفتیش اے ایس آئی محمد شریف نے کی اور تفتیش میں مدعی کوئی الزام ثابت نہ کرسکا۔اور تفتیشی آفیسر نے اسے بے گناہ قرار دیدیا۔ اس پر مدعی اکرام الحق نے ایس ایچ او پیپلز کالونی قمر ساجد‘ اے ایس آئی خالد پرویزاور چار دیگر اہلکاروں کیساتھ ساز باز ہو کر اسے گھر سے اٹھا لیا۔ غیرقانونی طور پر تھانے میں بند رکھا ۔ رہائی کے بدلے اس کے والد سے بھاری رشوت طلب کی گئی۔ رشوت سے انکار کرتے ہوئے اس کے والد نے سیشن کورٹ میں رٹ دائر کردی تو اے ایس آئی خالد پرویز اور نے جعلی ریمانڈ پیپر تیار عدالت میں جمع کروا دیا۔ شہری کی درخواست پر اعلیٰ پولیس حکام نے اس معاملے کی تفتیش کی تو دونوں تھانیدار اور دیگر اہلکار گناہگار ثابت ہوئے ۔ ان کیخلاف وردی کا غیرقانونی استعمال کرنے اور جعلی ریمانڈ پیپر تیار کرنے کا الزام ثابت ہو گیا۔ پولیس اہلکاروں کیخلاف تھانہ پیپلز کالونی میں پولیس آرڈر 2002کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ تاہم ابھی کسی اہلکار کو گرفتار نہیں کیا گیا۔

Related posts