نسلی امتیاز: پنجاب بھر میں پختونوں کیخلاف آپریشن

 

اسلام آباد(رانا حامد یٰسین)شہباز شریف حکومت نے پختونوں کیخلاف پنجاب بھر میں نسلی امتیاز پر مبنی آپریشن شروع کر رکھا ہے۔ نسلی امتیاز پر آپریشن کو دہشت گردی کی آڑ میں چلایا جا رہا ہے۔ پختونوں کے علاقے پولیس کی عام کارروائیوں کا نشانہ بن رہے ہیں اور ٹارگٹڈ آپریشن کی بجائے ہرپٹھان کو تفتیش کیلئے حراست میں لیا جا رہا ہے۔ نیوز لائن کے مطابق کارروائی کے دوران موقع پر پوچھ گچھ اور شناخت چیک کرنے کی بجائے پولیس پختونوں کو حراست میں لے کر تھانہ یاترا کرواتی ہے اور کئی کئی گھنٹے بلاوجہ حراست میں رکھنے کے بعد محض شناختی کارڈ چیک کرکے رہا کر دیا جاتاہے۔ پنجاب پولیس سائنٹیفک انداز میں تفتیش کرنے اور کسی کی انتہا پسندی میں ملوث ہونے کی رپورٹس پر کارروائی کرنے کی بجائے صرف اس بنیاد پر کارروائی کر رہی ہے کہ کوئی پختون علاقوں میں رہائش پذیر ہے یا یہ کہ کوئی پشتو بولتا ہے یا کسی کا حلیہ پٹھانوں جیسا ہے۔ پولیس آپریشن کے دوران کوئی چیکنگ کر رہی ہے اور نہ کسی کیخلاف ٹارگٹڈ آپریشن کیا جا رہا ہے محض پختون ہونے پر پاکستانی شہریوں پر دہشت گردی میں ملوث ہونے کا لیبل چسپاں کرکے تھانہ یاترا کروانا اور اس طرح کی گرفتاریاں کرنا معاشرے میں نسلی امتیاز بڑھانے کا باعث بن رہا ہے سوشل سائنسز کے ماہرین کے مطابق یہ نسلی امتیاز کا یہ سلسلہ بند نہ ہوا تو آنیوالے چند سالوں میں یہ صورتحال پاکستانی معاشرے کیلئے انتہائی خطرناک ثابت ہو گی

Related posts