مسلم لیگ ن نے لوڈ شیڈنگ دسمبر2017تک ختم کرنے کا اعلان کر دیا


فیصل آباد(نیوزلائن)دسمبر 2017تک لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ ہو جائیگاجس سے پاکستان میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری متوقع ہے تاہم ملکی برآمدات میں کمی باعث تشویش اور معیشت کیلئے خطرناک ہے۔ یہ کہنا ہے وزیر مملکت اورسرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین ڈاکٹر مفتاح اسماعیل کا۔ فیصل آباد چیمبر آف کامرس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بجلی کے جاری منصوبوں کی تکمیل دسمبر 2017تک ہو جائیگی جس سے نئی صنعتوں کی قیام کی راہ ہموار ہوگی اور توقع ہے کہ اس کے ساتھ ہی بڑے پیمانے پر غیر ملکی سرمایہ کاری بھی ہوگی۔ اقتصادی راہداری منصوبے کے پہلے مرحلہ میں 51 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہوگی اس میں سے 34 ارب ڈالر کے صرف پاور پلانٹ لگیں گے۔یہ قرضہ نہیں اور یہ پلانٹ انہی شرائط کے مطابق لگ رہے ہیں جن کے تحت 1994 ء میں بے نظیر بھٹو اور 2002 ء میں مشرف کے دور میں پاور پلانٹ لگے تھے۔ نیشنل ہائی وے اتھارٹی کارپورٹ فولیو 30 ارب سے بڑھ کر 140 ارب ہو گیا ہے۔ اس کے تحت ملتان لاہور موٹروے کے علاوہ ملک بھر میں شاہراہیں تعمیر ہو رہی ہیں ان کیلئے چین کی حکومت نے نرم شرائط پر قرض دیا ہے جسے ہم چین سے ملنے والے ٹال سے ہی ادا کر دیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ سی پیک کے تحت 9انڈسٹریل زون قائم کئے جائیں گے۔ ان میں چینی سرمایہ کار بھی انہی شرائط پر صنعتیں لگائیں گے جو پاکستانی سرمایہ کاروں پر لاگو ہونگی۔انکا کہنا تھا کہ بزنس کمیونٹی کے مفادات کو ہر سطح پر تحفظ دیا جائیگا اور اس مقصد کیلئے چینی سرمایہ کاروں کے ساتھ مشترکہ منصوبے شروع کرنے کو بھی ترجیح دی جائیگی۔

Related posts