پنجاب کے مدارس انتہا پسندی میں ملوث‘ شہباز شریف حکومت کارروائی سے گریزاں

اسلام آباد(رانا حامدیٰسین)پنجاب کے 299مدارس انتہا پسندی‘ ملک دشمنی میں ملوث نکلے۔یہ مدرسے دہشت گردوں کی سہولت کاری‘ فرقہ واریت پھیلانے اور انتہا پسند تیار کرنے میں ملوث پائے گئے ہیں۔ پنجاب حکومت نے ان کے بارے میں معلومات اور تفصیلات ہونے کے باوجود کوئی ایکشن لینا گوارہ نہ کیا محض رپورٹ بنا کر وفاقی حکومت کو ارسال کردی اور شہباز شریف حکومت کا فرض ادا ہو گیا۔نیوز لائن کے مطابق پنجاب کے 299مدارس کے بارے میں رپورٹ سامنے آئی ہے کہ وہ انتہا پسندی‘ دہشت گردوں کی سہولت کاری اور ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہیں۔ ان مدارس کی مشکوک سرگرمیوں کے خلاف رپورٹ بھی پنجاب حکومت نے خود تیار کی ہے۔ مشکوک سرگرمیوں میں ملوث مدارس بارے انکشاف پنجاب حکومت کے مدارس کی جیوٹیگنگ کرنے کے دوران ہوا۔ مشکوک قرار دئیے گئے مدارس کو پنجاب حکومت نے جیوٹیگنگ میں کیٹگری بی میں رکھا ہے۔ مدارس کی مشکوک سرگرمیوں بارے تفصیلی رپورٹ تیار کرکے پنجاب حکومت نے وفاقی حکومت کو بھجوا دی ہے تاہم مدارس بارے اطلاعات اور تفصیلات ہونے کے باوجود ان کے خلاف پنجاب حکومت نے ایکشن لینے سے احتراز کیا ہے اور ملک دشمن سرگرمیوں‘ فرقہ واریت‘ دہشت گردوں کی سہولت کاری میں ملوث ہونے کے باوجود صوبے کے مختلف علاقوں میں قائم ان مشکوک مدارس کو کام کرنے کی مکمل آزادی دے رکھی ہے۔

Related posts