مردان یونیورسٹی میں ساتھیوں کے تشدد سے طالبعلم جاں بحق

مردان(نیوزلائن)صوبہ خیبر پختونخوا کے شہر مردان میں واقع عبدالولی خان یونیورسٹی میں دیگر طلبہ کے تشدد سے ایک طالب علم جاں بحق ہوگیا۔ذرائع کے مطابق جاں بحق ہونے والے طالب علم پر الزام تھا کہ اس نے فیس بک پر ایک پیج بنا رکھا تھا، جہاں وہ توہین آمیز پوسٹس شیئر کیا کرتا تھا۔ڈی آئی جی مردان عالم شنواری کے مطابق اسی الزام کے تحت مشتعل طلبہ کے ایک گروپ نے مذکورہ طالب علم پر تشدد کیا، اس دوران فائرنگ بھی کی گئی، تشدد کے نتیجے میں طالب علم جاں بحق ہوگیا۔طالب علم کی لاش کو پولیس نے تحویل میں لے کر پوسٹ مارٹم کے لیے منتقل کردیا۔ڈی آئی جی کے مطابق واقعے میں ملوث 15افراد کو گرفتار کرلیا گیا جبکہ مزید کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جارہے ہیں۔تشدد سے جاں بحق ہونیوالے طالب علم کی شناخت مشال کے نام سے ہوئی ہے ،جاں بحق ہونے والا طالب علم شعبہ ابلاغ عامہ میں طالب علم تھا۔یونیورسٹی میں ہنگامہ آرائی، فائرنگ اورتوڑ پھوڑ کے نتیجے میں 5طالب علم زخمی بھی ہوئے ہیں، جنہیں طبی امداد کے لیے اسپتال منتقل کیا گیا ہے۔ دوسری جانب اسسٹنٹ رجسٹرار کے مطابق واقعے کے بعد یونیورسٹی سے متصل ہاسٹلز کو خالی کرالیا گیا جبکہ عبدالولی خان یونیورسٹی کو غیر معینہ مدت کے لیے بند کردیا گیا۔

Related posts