پنجاب کے سرکاری تعلیمی اداروں میں چھٹیوں کی بھرمار‘ معیار تعلیم متاثر

لاہور(نیوزلائن)شہباز شریف حکومت کی تعلیمی معاملات میں عدم دلچسپی اور غلط پلاننگ کی وجہ سے پنجاب کے سرکاری تعلیمی اداروں میں چھٹیوں کی بھرمار ہے اور بچوں کا تعلیمی معیار بری طرح متاثر ہو رہا ہے۔ گزشتہ تعلیمی سال کے دوران سو دن بھی پڑھائی نہیں ہو سکی جبکہ رواں تعلیمی سال بھی چھٹیوں کی بھرمار ہونے کا ہی امکان ہے۔نیوزلائن کے مطابق پنجاب حکومت نے صوبہ بھر کے تعلیمی اداروں میں چھٹیوں پر چھٹیاں کرنے پر فوکس جما رکھا ہے۔پنجاب حکومت کی غلط منصوبہ بندی اور تعلیمی معاملات سے عدم دلچسپی کی وجہ سے سکولوں اور کالجوں میں بچوں کو چھٹیوں کی موج کروائی جا رہی ہے جس کی وجہ سے صوبہ بھر میں تعلیمی معیار بری طرح متاثر ہو رہا ہے۔ گزشتہ تعلیمی سال کے 365دنوں میں سے سرکاری سکولوں میں 100دن بھی پڑھائی نہیں ہو سکی۔ جبکہ رواں تعلیمی سال میں بھی حکومت کا فوکس پڑھائی کی طرف نہیں ہے۔کتابیں تاخیر سے آنے کی وجہ سے تعلیمی سال کا آغاز ہی بروقت نہ ہوسکا اور سکولوں میں طلبہ کوپہلے سیشن کا نصاب ہی مکمل نہیں کرایا جا سکا۔جبکہ گرمیوں کی چھٹیاں جلدی ہونے سے تعلیمی سال کا پہلا سیشن ہی نامکمل رہنے کا امکان ہے جبکہ پورے سال کے حوالے سے بھی محکمہ تعلیم اور پنجاب حکومت کی کوئی پلاننگ ابھی تک نہیں ہے۔نیوزلائن کے مطابق سرکاری سکولوں میں گزشتہ تین سالوں کے دوران ایک مرتبہ بھی بچوں کو سالانہ نصاب مکمل نہیں کرایا جا سکا جس کی وجہ پنجاب حکومت کی طرف سے سکولوں کو ضرورت سے زیادہ چھٹیاں کرنا اور اساتذہ کو تدریسی کی بجائے دیگر کاموں میں مصروف رکھنا بتایا جاتا ہے۔

Related posts