جے آئی ٹی کے سامنے پیشی،شہباز شریف سے ساڑھے3گھنٹے پوچھ گچھ

اسلام آباد(روز نامہ اوصاف )وزیراعلیٰ پنجاب محمدشہبازشریف پاناماکیس کی جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوگئے،جے آئی ٹی نیشہبازشریف سے ساڑھے تین گھنٹے سے زائدوقت تک پوچھ گچھ کی گئی۔میڈیارپورٹس کے مطابق پاناماکیس کی جے آئی ٹی کے سربراہ واجدضیاء کی سربراہی میں اجلاس ہوا،جس میں وزیراعلیٰ پنجاب محمدشہبازشریف پیش ہوئے۔وزیراعلیٰ شہبازشریف کی جے آئی ٹی کے سامنے پیشی سے قبل پنجاب ہاؤس اسلام آبادمیں اہم اجلاس بھی ہوا۔ شہبازشریف سے پاناماکیس کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے ساڑھے تین سے زائدوقت سوالات کیے۔ذرائع کے مطابق شہبازشریف سے سپریم کورٹ کی جانب سے جاری کردہ منی ٹریل اور گلف اسٹیل ملز،حدیبیہ پیپرزملزاور خاندانی کاروبارسے متعلق سوالات پوچھے گئے۔ شہبازشریف کی جے آئی ٹی کے سامنے آج پہلی پیشی تھی۔ وزیراعلیٰ پنجاب 11بجے جوڈیشل اکیڈمی میں پہنچے ،اور ساڑھے تین گھنٹے سے زائدوقت سوالات کے جوابات دیے۔ اس سے قبل وزیراعظم نوازشریف ایک باراوروزیراعظم کے صاحبزادے حسین نوازپانچ مرتبہ جبکہ حسن نواز2مرتبہ جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوکراپنے مئوقف کادفاع کرچکے ہیں۔ شہبازشریف کی جے آئی ٹی کے سامنے پیشی کے دوران سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے۔پیشی کے بعدانہوں نے میڈیاسے گفتگوکرتے ہوئے کہا کہ عدالت عظمیٰ نے س جے آئی ٹی کی تصدیق کی ،اس نے مجھے کال نوٹس بجھوایا۔کہ میں ان کے سامنے پیش ہوکرپاناماکیس کے بارے بتاؤں۔میں الحمداللہ اپناسارابیان ریکارڈکروادیاہے۔میں یہ کہناچاہوں گاکہ پرسوں وزیراعظم نوازشریف بھی جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوئے تھے۔جس سے پاکستانی تاریخ میں ایک نیاباب رقم ہوا۔وزیراعظم اور میں نے جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوکرقانون کی حکمرانی کی خدمت کی ہے۔اس سے ثابت ہواکہ ہم منتخب سیاستدان آئین و قانون کااحترام کرتے ہیں۔شہبازشریف نے کہاکہ بندوق کی طاقت پراقتدارپرشب خون مارتے ہیں ان کاعدلیہ اور قانون کے ساتھ کیارویہ ہے۔سب جانتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مجھے کمرکاپراناعارضہ ہے۔میں نے کمرکی تاریخ کابہانہ نہیں بنایا۔پنڈی میں یالندن میں اپنے معالج کے پس نہیں چلاگیا۔لیکن میں نے عاجزی سے اپنامئوقف پیش کیا۔یہ بات سامنے رہنی چاہیے کہ شریف برادران کااحتساب پہلی بارنہیں

Related posts