اے ڈی خواجہ فارغ: دستی کو آئی جی سندھ بنانے کی منظوری


اسلام آباد(نیوزلائن)وفاقی کابینہ نے اے ڈی خواجہ کی جگہ پولیس گروپ کے 22گریڈکے افسر سردار عبدالمجید دستی کوآئی جی سندھ لگانے کی منظوری دے دی۔ذرائع کے مطابق وفاقی کابینہ کا اجلاس وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی زیر صدارت ہوا ۔ سندھ حکومت نے سردار عبدالمجید دستی، مہر خالق داد لک اور آئی جی پنجاب عارف نواز کے ناموں پر مشتمل سمری وفاقی حکومت کو ارسال کی تھی، تاہم سمری میں سردار عبدالمجید کو آئی جی سندھ لگانے کی سفارش کی گئی تھی، اے ڈی خواجہ نے آئی جی سندھ کے طور پر کام کرنے سے معذوری ظاہر کی تھی۔تفصیلات کے مطابق سردار عبدالمجید 22گریڈمیں ترقی ملنے کے باوجود سندھ میں ہی تعینات تھے ، تاہم انہیں کوئی عہدہ نہیں دیا گیا تھا کیوں کہ آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ گریڈ 21کے افسر تھے اور سردار عبدالمجید خان ان کے ماتحت کام نہیں کرنا چاہتے تھے ۔ ذرائع کے مطابق اے ڈی خواجہ نے سندھ سے نکلنے کے لیے وفاقی حکومت سے رابطہ کیا تھا اور درخواست کی تھی کہ وہ اب آئی جی سندھ کے طور پر مزید کام کرنے کے لیے تیار نہیں ہیں، چونکہ صوبائی حکومت نے ان کے ساتھ ناروا سلوک روا رکھا ہے اور ان کے احکامات پرعمل درآمد کے بجائے کام سے روکا جاتا ہے ، اے ڈی خواجہ کی درخواست پر وفاقی حکومت نے آئی جی سندھ کے لیے صوبائی حکومت کوسمری ارسال کرنے کی ہدایت کی تھی، جس پر پہلی سمری سردار عبدالمجید دستی، آئی جی موٹرویز سید کلیم امام اور ایڈیشنل آئی جی سندھ غلام قادر تھیبو کے نام پر مشتمل تھی، جسے وفاقی کابینہ نے مسترد کر دیا تھا اور صوبائی حکومت کو نئی سمری ارسال کرنے کی ہدایت کی تھی۔ سردار عبدالمجید دستی کی بطور آئی جی تعیناتی کا نوٹیفکیشن جلد جاری کر دیا جائے گا اور اﷲ ڈنو خواجہ کی خدمات سندھ سے واپس لے لی جائیں گی۔

Related posts