تعلیمی اداروں میں اساتذہ اور انتظامی عملہ منشیات فروشی میں ملوث



فیصل آباد(نیوزلائن) تعلیمی اداروں کے اساتذہ اور انتظامی عملہ نے مافیا کا روپ دھار لیا۔ سکولوں‘ کالجوں‘ یونیورسٹیوں میں ٹیچرز‘ انتظامی عملے کے منشیات فروشی میں ملوث ہونے کی رپورٹس سامنے آرہی ہیں۔غیرقانونی سرگرمیوں میں ملوث اساتذہ کو منشیات فروش مافیازکا ساتھ بھی میسر ہے اور اعلیٰ بیوروکریسی‘ بلدیاتی نمائندوں‘ سیاسی شخصیات کی پشت پناہی بھی حاصل ہے۔نیوزلائن کے مطابق فیصل آباد کے تعلیمی اداروں کے حوالے سے مسلسل رپورٹس سامنے آرہی ہیں کہ وہاں منشیات فروشی کی جارہی ہے اور نوجوان نسل کو منشیات کا عادی بنایا جا رہا ہے۔زرعی یونیورسٹی فیصل آباد‘ جی سی یونیورسٹی فیصل آباد‘ پنجاب میڈیکل کالج (فیصل آباد میڈیکل یونیورسٹی) ‘ کے علاوہ خواتین کی یونیورسٹیوں اور کالجز اور شہر کے درجنوں سکولوں اور کالجوں کے حوالے سے رپورٹس سامنے آچکی ہیں کہ وہاں منشیات فروشی کی جارہی ہے۔فیصل آباد پولیس کی ایک رپورٹ میں سامنے آیا ہے کہ تعلیمی اداروں کے طلبامیں منشیات کارجحان بڑھ رہاہے۔ اسی تناظر میں پولیس کو انسدادی کارروائیاں کرنے کے احکامات بھی جاری کئے جاتے رہے ہیں۔ اسی حوالے سے یہ انکشاف بھی ہوا ہے کہ کالجوں اور یونیورسٹیوں میں اساتذہ اور انتظامی عملہ بھی منشیات فروشی میں بالواسطہ اور بلاواسطہ ملوث ہے۔ان اساتذہ اور انتظامی عملے کو اہم شخصیات کی پشت پناہی حاصل ہے ۔ متعدد موجودہ اور سابق بلدیاتی نمائندے بھی ان کی پشت پناہی کرتے ہیں جبکہ بااثر سیاسی شخصیات کا ساتھ بھی انہیں حاصل ہے۔

Related posts