میرا قصور کیا ہے۔۔۔؟

قبروں سے تاریک شاہی قلعے کے عقوبت خانوں کے باہر’ دوزخ ‘سے مستعار مستعد اہلکاراس قدر ’ڈیوٹی فل‘ ہیں کہ پرندے اڑنے پر بھی ضیائی اقتدار کیلئے خطرہ محسوس کرتے ہیں ،میں باہر ضیائی اقتدار کو سہارا دینے والوں کی شکلیں نہیں دیکھ سکتا لیکن چشمِ تصور میں مجھے سب کے سب بیوقوف کہتے اور ٹھٹھے لگاتے محسوس ہوتے ہیں جن پر مجھے غصہ نہیں ترس آتا ہے،میں شدید دکھ اور کرب میں مسکرا دیتا ہوں اور ان کیلئے بمشکل ہلنے والے ہاتھ اٹھا کر دعا کرتا ہوں اور مجھے…

Read More

مرثیۂ سیاست

دورِ زوّال ہے ورنہ میرزا داغؔ دہلوی زندہ ہوتے تو دہلی کی تباہی پر جس طرح کا شہرآشوب مسدّس انہوں نے لکھا تھا وہ آج تحریر کرتے تو موجودہ سیاست کا حال سننے والے دل تھام کر ہی اسے سن پاتے۔ الطاف حسین حالیؔ کا دور ہوتا تو وہ ”دہلی مرحوم‘‘ یا ”مدّوجزر اسلام‘‘ جیسا قومی مرثیہ لکھ دیتے۔ حضرت علامہ اقبالؔ ہوتے تو ”صقلیہ‘‘ اور ”گورستان شاہی‘‘ جیسے قومی مرثیے کو یوں لکھتے کہ مرثیہ کا دورِ خلیقؔ و ضمیرؔ اور زمانۂ انیسؔ و دبیرؔ زندہ ہو جاتا مگر…

Read More

اساتذہ کی ماہانہ تنخواہ

  درس وتدریس پیشہ پیغمبری ہے جودین اسلام کا بنیادی جزو ہے لیکن صد افسوس پاکستان سمیت دنیا بھر کے مسلمانوں نے اسے نہیں اپنایا۔ برطانیہ ، امریکہ اور ایشیا کے تعلیمی نظام کی نسبت ایک چھوٹے سے یورپی ملک کی انقلابی تعلیمی پالیسی نے اساتذہ کیلئے شعبہ درس و تدریس کو پیشہ پیغمبری کی زند ہ و جاوید مثال بنادیا۔ 25 سال پہلے کا ذکر ہے شمالی یورپ کے ایک چھوٹے سے ملک جس کی معیشت دگرگوں اور انڈسٹری زوال پذیر تھی اس میں مایوسی کا راج تھا امید…

Read More

حرامزادے ملازم۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انھیں میڈیا کی کوئی خبر ہے نہ اینکرنگ کے بلند مقام کاپتہ۔۔۔یہ گھریلو ملازمین تو اسکرین پر ڈرامہ اور فلم ایکٹرز کو ٹی وی کی پہچان سمجھتے ہیں جن ایکٹرز کو صحافت یا ٹی وی جرنل ازم کی اخلاقیات کا کوئی اتاپتا نہیں ہوتا۔بس اسکرین پر آتےہیں اور بولتے چلے جاتےہیں کبھی ہیرو تو کبھی ولن کا کردار باآسانی کرلیتےہیں ۔۔کس کو خوش کرنا ہے کسے ناراض۔۔۔۔ بس پروڈیوسر انھیں اپنے اسکرپٹ کے مطابق بتا دیتا ہے اور یہ ایکٹرز اپنے اپنے ا نداز میں پرفارمنس دے دیتےہیں حتی کہ…

Read More

عمران خان کا ایک مخصوص رویہ اور عادت

غور کیجیے رویے کا ایک مخصوص پیٹرن ہے جو بار بار دہرایا جا رہا ہے۔ پیٹرن یہ ہےکہ جب بھی اپنے خلاف کیس ہو تو اسے لٹکاؤ، ممکن ہو تو پیش ہی نہ ہو تاکہ غیر حاضری میں فیصلہ صادر ہونے کو عدم انصاف سے تعبیر کیا جا سکے۔ اور اگر کسی مخالف کے خلاف کیس سے کوئی معدوم سے معدوم سیاسی فائدہ حاصل ہونے کی توقع ہو تو صبح شام میڈیا پر بیانات جاری کرتے پھرو، وجہ بے وجہ عدالتوں کی چکر کاٹتے پھرو ۔۔۔ اور اپنی قانون پسندی…

Read More