الیکشن2018‘ چنیوٹ میں پیپلز پارٹی مضبوط‘ن لیگ فارغ


فیصل آباد(نیوزلائن)چنیوٹ میں آمدہ الیکشن میں پیپلز پارٹی کی پوزیشن مضبوط نظر آتی ہے۔ پی پی پی کے ڈویژنل صدر حسن مرتضیٰ یہاں سے مضبوط امیدوار ہو سکتے ہیں۔یہاں موجودہ ایم این اے ن لیگ کے قیصر اے شیخ ہیں جن کی عوامی شخصیت نہ ہونے کا نقصان ن لیگ کو اٹھانا پڑ رہا ہے۔ شہر میں یہ بھی افواہیں ہیں کہ قیصر اے شیخ کے دوسری جماعتوں سے بھی رابطے ہیں اور وہ الیکشن سے پہلے پارٹی بدل سکتے ہیں۔ چنیوٹ میں ن لیگ کے سرگرم رہنما شیخ قیصر محمود ہیں مگر گزشتہ الیکشن میں ن لیگ نے سرمایہ دار امیدار قیصر اے شیخ کو ترجیح دیتے ہوئے شیخ قیصر محمود کو نظر انداز کیا جس سے وہ بددل ہیں اور پارٹی امور میں وہ دلچسپی نہیں لیتے رہے جو ان کی پہچان تھی۔ یہ بھی سنا جا رہا ہے کہ ان سے بھی پی ٹی آئی رابطے کر رہی ہے اور الیکشن کا ماحول دیکھ کر وہ پارٹی بدلنے بارے سوچ سکتے ہیں۔ چنیوٹ میں پی ٹی آئی مختلف دھڑوں میں منقسم ہے۔ پی ٹی آئی کے سابق امیدوار عنائت علی شاہ تھے جو پی پی پی کے ایم این اے بھی رہے ہیں۔وہ اس بار بھی الیکشن میں حصہ لیں گے۔ انہیں پی ٹی آئی کے ہی رہنما ذوالفقار شاہ کا چیلنج درپیش ہے جو ابھی سے اپنی انتخابی مہم شروع کئے ہوئے ہیں۔ یہاں پی ٹی آئی مسلم لیگ ن کے رہنماؤں قیصر اے شیخ اور شیخ قیصر محمود سے بھی رابطے کر رہی ہے اور ہو سکتا ہے کہ سید برادری کے دونوں امیدوار ہی نظر انداز ہو جائیں۔گومگوں کی کیفیت کے پیش نظر پی ٹی آئی کا کوئی بھی رہنما انتخابی نقطہ نظر سے عوامی رابطے کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے۔ ن لیگ کے دونوں متوقع امیدوار بھی پارٹی چھوڑنے اور نہ چھوڑنے کی سوچ کے درمیان چکرا رہے ہیں۔جس کا فائدہ سرگرمی سے عوامی رابطہ مہم چلانے والے حسن مرتضیٰ کو ہو سکتا ہے۔

Related posts