عارضی لگائی نہیں’ مستقل آئی نہیں: جی سی ویمن یونیورسٹی سربراہ سے محروم

فیصل آباد ( احمد یٰسین) جی سی ویمن یونیورسٹی فیصل آباد ایک ماہ سے سربراہ سے محروم ہے۔ مستقل وائس چانسلر تعینات ہونے کے باوجود ابھی تک چارج لینے نہیں آئیں جبکہ گورنر پنجاب نے عارضی وائس چانسلر کسی کو لگایا ہی نہیں ہے۔ ایک ماہ سے یونیورسٹی سربراہ سے محروم ہے اور اس کے انتظامی امور بری طرح متاثر ہورہے ہیں۔ نیوز لائن کے مطابق جی سی ویمن یونیورسٹی فیصل آباد ایک ماہ سے بغیر کسی سربراہ کے ایسے چل رہی ہے جیسے بغیر کپتان کے کھلے سمندر میں بحری بیڑا ڈولتا رہتا ہے۔ گورنر پنجاب نے ڈاکٹر خان زادی فاطمہ کو مستقل وائس چانسلر تعینات کردیا ہے مگر دو ہفتے ہونے کو آئے وہ چارج لینے ہی نہیں آئیں۔ ڈاکٹر صوفیہ انور اپنی چھے ماہ کی مدت تعیناتی مکمل کرکے واپس جا چکی ہیں اور ان کے جانے کے بعد 19اپریل سے یونیورسٹی بغیر کسی سربراہ کے چل رہی ہے۔ یونیورسٹی کے معاملات کی دیکھ بھال کیلئے مستقل رجسٹرار ہے اور نہ ہی کوئی ڈین جو اس بحرانی صورتحال میں یونیورسٹی کے معاملات کو سنبھال سکے۔ کسی بھی سنیئر ایڈمنسٹریٹو آفیسر کی عدم موجودگی میں ایک ماہ تک ویمن یونیورسٹی کو بغیر سربراہ کے چھوڑ دینا حکومتی بے پرواہی اور معاملات کو نظر انداز کرنے کی روش کا ثبوت پیش کررہی ہے۔ مستقل وی سی کی آمد میں تاخیر کی مدت میں عارضی وائس چانسلر کی تعیناتی نہ کرنا بھی معاملات کو معنی خیز پراسراریت کا شکار کررہا ہے۔

Related posts