رانا ثناء اللہ کی جیل میں انتہائی بری حالت ہے‘ اہلیہ کا الزام

فیصل آباد (نیوز لائن) مسلم لیگ ن کے صوبائی صدر اور سابق وزیر قانون رانا ثنااللہ کی اہلیہ نبیلہ ثناء نے کہا ہے کہ رانا ثناء اللہ کو جیل میں روز بروز اذیت دی جارہی ہے۔ان کے ریمانڈ میں ان کی بیماری کا ذکر کیا گیا تھا تاہم انہیں پرہیزی کھانا نہیں دیا جا رہا اور گھر سے ان کا کھانا بند کردیا گیا ہے۔ انہیں جیل میں عام قیدیوں کے ساتھ رکھا جارہا ہے جہ کہ ان کے ساتھ زیادتی ہے۔رانا ثناء اللہ کی جیل میں انتہائی بری حالت ہے۔لاہور سے واپس فیصل آباد آکر ارکان اسمبلی رانا علی عباس‘ مہر حامد رشید‘ اجمل آصف‘فقیر حسین ڈوگر‘ ظفر اقبال ناگرہ‘ سابق ارکان اسمبلی جعفر علی ہوچہ‘ میاں عبدالمنان و دیگرکے ساتھ پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جیل حکام نے رانا ثنااللہ سے دو دن تو ملنے ہی نہیں دیا۔پہلے دن جب جیل میں ملنے گئے ہیں تو رانا ثناء اللہ کو پہچان نہیں سکے۔رانا صاحب کی جیل میں بہت بری حالت کی گئی۔انہیں جیل میں نشہ آور چیزیں دی جارہی ہیں۔ شہریار آفریدی کے بیانئے میں تضاد ہے۔ ہم حکومت کی طرف سے پروڈکشن آرڈر سمیت کسی بھی رعائت کیلئے نہیں دیکھ رہے تاہم رانا ثناء اللہ کو قانون کے مطابق جو ان کا حق ہے وہ دیا جائے۔ انہیں جیل میں بی کلاس دی جائے۔ گھر سے کھانا پہنچائے جانے کی اجازت دی جائے۔ ان کے معاملے کی درست تحقیقات کی جائیں۔ رانا ثناء اللہ منشیات فروشی کا سوچ بھی نہیں سکتے انہیں انصاف دیاجائے۔ ان پر لگائے جانیوالے الزامات غلط ہیں۔رانا ثناء اللہ کے معاملے پر ہمیں ڈرایا دھمکایا جا رہا ہے۔ ہمیں جان سے مارنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ رانا ثناء اللہ کی گرفتاری کے وقت کی فوٹیج اور شواہد سامنے لائے جائیں۔ جبکہ رانا ثناء اللہ کی جیل کی سلاخوں میں بند کھڑے کی تصویر لیک کرنے کی انکوائری کی جائے۔

Related posts