سنٹرفار ایڈوانس سٹڈیز جامعہ زرعیہ کو’’ڈی ایٹ سنٹر ‘‘کا درجہ مل گیا


فیصل آباد (محمد امین) وفاقی حکومت نے زرعی یونیورسٹی فیصل آباد میں قائم سنٹر فار ایڈوانس سٹڈیز اینڈ فوڈ سکیورٹی کو ’’ڈی ایٹ سنٹر ‘‘ کادرجہ دیدیا ہے۔ سنٹر فار ایڈوانس سٹڈیز کو یو ایس ایڈ سے ریسرچ کو فروغ دینے کیلئے گرانٹ ملتی تھی ۔ ایک سال قبل یو ایس ایڈ سے گرانٹ بند ہونے کے بعد سے یہ سنٹر عملی طور پر بند ہی تھا ۔ اب حکومت نے اسے ڈی ایٹ سے منسل کردیا ہے ۔ توقع کی جارہی ہے کہ ڈی ایٹ ممالک کی فنڈنگ سے اس ریسرچ سنٹر کو فعال کیا جا سکے گا۔ نیوزلائن کے مطابق وزارت خارجہ حکومت پاکستان نے سنٹر فار ایڈوانس سٹڈیز زرعی یونیورسٹی فیصل آباد کو ترقی پذیر ممالک کی تنظیم ڈی ایٹ سے مسلک کردیا ہے اور اسے ’’ڈی ایٹ سنٹر‘‘ کا درجہ دیدیا ہے۔وزارت خارجہ نے اس حوالے سے زرعی یونیورسٹی حکام کو بھی آگاہ کردیا ہے جبکہ ہائیرایجوکیشن کمیشن اور ڈی ایٹ تنظیم کے ہیڈکوارٹر کو بھی آگاہ کردیا گیا ہے تاہم ابھی تک ’’ڈی ایٹ سنٹر‘‘ کی فنڈنگ ‘ ریسرچ گرانٹ‘ ورکنگ طریقہ کار اور مزید تفصیلات سامنے نہیں آسکیں۔ جامعہ زرعیہ کے سنڑع فار ایڈوانس سٹڈیز کو یو ایس ایڈ کی گرانٹ سے چلایا جا رہا تھا کہ اچانک دسمبر 2017 میں یو ایس ایڈ نے اس کی فنڈنگ روک دی تھی۔ یو ایس ایڈ سے فنڈنگ رکنے کے بعد ’’سی اے ایس‘‘ کو چلانا ناممکن حد تک مشکل ہو گیا ۔ سنٹر میں جاری تحقیقاتی منصوبے متاثر ہونے لگے جبکہ ملازمین کی تنخواہیں ادا کرنا بھی ناممکن ہو گیا تھا۔ متعدد ملازمین کو فارغ کردیا گیا اور عملی طور سنٹر غیرفعال ہو گیا تھا۔اکنامک تعاون کی آٹھ ترقی پذیر ممالک کی تنظیم ’’ڈی ایٹ‘‘ کیساتھ منسلک ہونے سے اس سنٹر کے دوبارہ فعال ہونے اور ریسرچ کو مزید آگے بڑھانے کی توقع کی جارہی ہے۔

Related posts