شکریہ مانیکا :آئی جی پنجاب کو عوام کی تذلیل کا احساس کروا دیا


فیصل آباد(عاطف چوہدری)پاکپتن میں پولیس ناکے پر پہلی بار کسی طاقتور شخصیت کے پھنستے ہی آئی جی پنجاب کو پولیس کے چیکنگ ناکوں سے عوام کے تنگ آنے کا احساس ہو گیااور پنجاب بھر میں پولیس کے روائتی چیکنگ ناکے ختم کرنے اور عوام کو چیکنگ کے نام پر عذاب سے دوچار کرنے کے پولیس کا روائتی ہتھکنڈا بند کرنے کا حکم جاری کردیا گیا ہے۔ نیوزلائن کے مطابق پنجاب بھر میں پولیس کے جگہ جگہ ناکے لگا کر عوام کی زندگی عذاب بنانے کی شکایات عام تھیں۔ پولیس ناکوں پر عوام کی تذلیل کرنے اور ان سے نذرانے وصول کرنے کی شکایات کے باوجود پنجاب پولیس کے حکام ان کیخلاف ایکشن لینے کوتیار نہیں تھے۔ پاکپتن میں ایک طاقتور حکومتی شخصیت کے چہیتے ’’پیر‘‘ خاور مانیکا کے پنجاب پولیس کے ناکے کے چکر میں پھنسنے پر پنجاب کی تاریخ میں پہلی بار آئی جی پنجاب کو احساس ہوا کہ پولیس کے چیکنگ ناکے مناسب نہیں ہیں۔ یہ ’’احساس‘‘ ہوتے ہی آئی جی پنجاب نے صوبہ بھر کی پولیس کو احکامات جاری کئے ہیں کہ پولیس کے روائتی ناکے ختم کردئیے جائیں۔ چیکنگ کے نام پر عوام کی تذلیل نہ کی جائے۔ ہر کسی کو روک کر تلاشی اور چیکنگ کے نام پر لوگوں کی زندگی اجیرن بنانے کا سلسلہ بند کیا جائے۔ نیوزلائن کے مطابق آئی جی پنجاب نے دو قدم آگے جاتے ہوئے پولیس کو یہ حکم بھی دیا ہے کہ چیکنگ ناکوں کے پوائنٹس طے کرنا ہی بند کردیا جائے۔ اس کے متبادل کے طور پر صرف سٹریٹ کرائم سے متاثر علاقوں میں سنیپ ایکشن اور وہ بھی صرف مشکوک افراد کیخلاف کرنے کا کہا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق آئی جی پنجاب کی طرف سے صوبے بھر کی پولیس کو وارننگ دی گئی ہے کہ کسی بھی جگہ پولیس کے روائتی ناکے کی رپورٹ ہونے یا شکائت سامنے آنے پر ذمہ دار پولیس اہلکاروں کیخلاف سخت ایکشن لیا جائیگا۔ برطرفی سمیت انہیں سخت سزائیں دی جائیں گی۔

Related posts