فیصل آبادپارکنگ کمپنی کے جگہ جگہ قبضے‘127غیرقانونی پارکنگ پوائنٹس


فیصل آباد(نیوزلائن)فیصل آباد پارکنگ کمپنی نے جگہ جگہ غیرقانونی پارکنگ پوائنٹس بنا کر شہر کا حلیہ ہی خراب کر دیا۔جبکہ غیرقانونی پارکنگ پوائنٹس بنا کر تجاوزات کی مرتکب ‘ سرکاری اراضی کا غیرقانونی استعمال کرنے اور ٹریفک میں رکاوٹ کے جرم کی مرتکب ہو رہی ہے۔ نیوزلائن کے مطابق فیصل آباد پارکنگ کمپنی کروڑوں روپے کی سالانہ کرپشن کیساتھ غیرقانونی پارکنگ پوائنٹس بنانے‘ سرکاری اراضی پر قبضہ جمانے اور ٹریفک کی روانی میں رکاوٹ کا کھلے عام ارتکاب کررہی ہے۔ذرائع کے مطابق فیصل آباد پارکنگ کمپنی نے شہر میں 167پارکنگ پوائنٹس بنا رکھے ہیں ۔ان میں صرف 40پوائنٹس پارکنگ کمپنی نے ڈکلیئر کئے ہیں جبکہ 127پوائنٹس کا کوئی حساب کتاب سرے سے رکھا ہی نہیں جا رہا اور ان کی آمدن بھی پراسرار طور پر غائب ہے۔قواعد کی رو سے پارکنگ کمپنی جس محکمے کی اراضی استعمال کرے گی اسے اپنی آمدن میں سے 75فیصد ادائیگی کی پابند ہے مگر پارکنگ کمپنی کی ایم ڈی کسی قانون اور قاعدے کو ماننے کو تیار ہیں اور نہ کسی محکمے کو آمدن میں سے حصہ دے رہی ہیں۔ پارکنگ کمپنی نے میونسپل کارپوریشن کی اراضی پر 148پوائنٹس بنا رکھے ہیں ان میں کسی ایک بھی پوائنٹ کی آمدن کا حصہ میونسپل کارپوریشن کو نہیں دیا جارہا۔ نیشنل ہسپتال ‘ میاں ٹرسٹ ہسپتال‘ الائیڈہسپتال سمیت متعدد مقامات پر بغیر ٹینڈر اور نیلامی کے پارکنگ سٹینڈز پر پارکنگ کمپنی نے ایک سابق ضلعی اعلیٰ آفیسر کی دھونس سے قبضہ جما رکھا ہے اور ان اداروں کو پارکنگ کمپنی کی وجہ سے سالانہ لاکھوں روپے کی آمدن سے محروم ہونا پڑا ہے۔قواعد کی رو سے میونسپل کارپوریشن ‘ ضلع کونسل‘ محکمہ صحت‘ محکمہ تعلیم‘محکمہ مال سمیت دیگر سرکاری اداروں کی اراضی کو پارکنگ کمپنی سمیت کوئی بھی پرائیویٹ کمپنی ‘ شخصیت یا سرکاری ادارہ متعلقہ محکمے کی پیشگی اجازت‘ جگہ کے کرایہ کا تخمینہ لگوائے ‘ اور باضابطہ نیلامی کئے بغیر استعمال نہیں کیا جا سکتا مگر فیصل آباد پارکنگ کمپنی جگہ جگہ بغیر کسی قانونی کارروائی مکمل کئے غیرقانونی پارکنگ پوائنٹس بنا کر قانون کی دھجیاں بکھیر رہی ہے اور کوئی اس کے خلاف ایکشن لینے والا نہیں ہے۔ ریونیو حکام کے مطابق فیصل آباد میں ایک انچ بھی فیصل آباد پارکنگ کمپنی کی نہیں ہے جبکہ میونسپل کارپوریشن اور سابقہ ٹی ایم ایز سمیت کسی کیساتھ اراضی حاصل کرنے کا معاہدہ بھی اس نے نہیں کیا ۔ اس کے باوجود سرکاری اراضی پر پارکنگ پوائنٹس بنانا ایف پی سی کا قانون کی کھلی خلاف ورزی ہے جس پر قواعد کی رو سے کمپنی کی ایم ڈی سمیت تمام حکام کیخلاف کارروائی عمل میں لائی جا سکتی ہے۔

Related posts

Leave a Comment