فیصل آباد ریجن کے 20ہزار کاشتکار نہری پانی چوری میں ملوث نکلے


فیصل آباد (احمد یٰسین) فیصل آباد ریجن کے 20ہزار سے زائد کاشتکار پانی چوری میں ملوث نکلے۔ نہری پانی کی چوری محکمہ انہار کے افسران‘ عملے اور ایریا واٹر بورڈ کے عہدیداروں کی ملی بھگت سے کئے جانے کی رپورٹس سامنے آئی ہیں۔ محکمہ انہار کے حکام پانی چور کاشتکاروں کیخلاف مقدمات کے اندراج اور کارروائی سے گریزاں ہیں صرف دکھاوے کیلئے چند ایک کاشتکاروں کیخلاف مقدمات درج کئے گئے ہیں جبکہ ہزاروں پانی چاروں کو عام معافی دیدی گئی ہے۔ نیوزلائن کے مطابق محکمہ انہار فیصل آباد ریجن میں بڑے پیمانے پر پانی چوری کی وارداتیں ہونے کی رپورٹس سامنے آئی ہیں۔ محکمہ انہار پنجاب کی رپورٹس کے مطابق فیصل آباد ریجن کے 20ہزار سے زائد کاشتکار پانی چوری میں ملوث ہیں۔ یہ کاشتکار عادی پانی چور ہیں اور انہوں نے محکمہ انہار کے حکام کے ساتھ ملی بھگت کرکے پانی چوری کو باقاعدہ ایک دھندہ بنا رکھا ہے۔ رپورٹس میں سامنے آیا ہے کہ فیصل آباد ریجن میں سب سے زیادہ پانی چوری ایل سی سی ایسٹ سرکل میں ہورہی ہے جبکہ ویسٹ سرکل میں بھی صورتحال کوئی تسلی بخش نہیں ہے۔ پانی چوری کے حوالے سے فیصل آباد ریجن کے ڈسٹرکٹ حافظ آباد کے کاشتکار سرفہرست ہیں۔ حافظ آباد کے پانی چوروں کیخلاف سینکڑوں درخواستیں چیف انجنیئر اور دیگر افسران کے پاس زیر التواء ہیں مگر حکام ان کے خلاف کارروائی کرنے سے گریزاں ہیں۔جھنگ ‘ فیصل آباداور چنیوٹ کے کاشتکاروں کی بہت بڑی تعداد بھی پانی چوری میں ملوث ہے اور ان کے خلاف بھی شکایات کے انبار محکمہ انہار میں زیرالتواء ہیں۔ آبپاشی ڈیپارٹمنٹ کی رپورٹس اور انکوائریوں میں یہ بھی سامنے آیا ہے کہ نہری پانی کی چوری میں کاشتکاروں کیساتھ محکمہ آبپاشی کے افسران بھی ملوث ہیں ۔ پانی چوری میں 20ہزار سے زائد فیصل آباد ریجن کے کاشتکاروں کے ملوث ہونے کی رپورٹس سامنے آچکی ہیں۔ ثبوت بھی محکمہ کے پاس موجود ہیں۔ مگر گورکھ دھندے کو مزید الجھانے کیلئے انہیں کھلی چھٹی دیدی گئی ہے۔ ثبوت موجود ہونے کے باوجود پانی چوروں کیخلاف کوئی ایکشن نہیں لیا جا رہا۔ مٹھی بھر کاشتکاروں کیخلاف مقدمات کا اندراج کرکے فائلوں کا پیٹ بھردیا گیاہے جبکہ پانی چور 20ہزار کاشتکاروں کو کھلی چھٹی اور عام معافی دیدی گئی ہے۔

Related posts