فیصل آباد میں پتنگ و ڈور بنانے والوں کیخلاف گرینڈ آپریشن کا فیصلہ


فیصل آباد(نیوز لائن) فیصل آباد میں پتنگیں اور ڈور بنانے والوں کیخلاف گرینڈ آپریشن کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ اس حوالے سے ڈپٹی کمشنر سردار سیف اﷲ ڈوگر کا کہنا ہے کہ پتنگ و ڈور سازی / خرید و فروخت کا قلع قمع اور پتنگ بازی کے خطرناک کھیل کو روکنے کے لئے پوری قانونی قوت استعمال کی جائے گی اس ضمن میں ضلعی انتظامیہ و پولیس کی مشترکہ مانیٹرنگ ٹیموں کی طرف سے بھر پور کریک ڈاؤن کیا جارہا ہے لہذا پتنگ و ڈور تیار کرنے کا غیر قانونی کارروبار کرنے والے فوری طور پر باز آجائیں وگرنہ وہ جیل کی سلاخوں کے پیچھے ہونگے ۔ انہوں نے یہ بات سی پی او اشفاق احمد خاں کے ہمراہ مشترکہ طور پر ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی جس میں ایس ایس پی اپریشن اسماعیل الرحمن ‘ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ( جنرل ) میاں آفتاب احمد اور خفیہ اداروں کے افسران کے علاوہ بزنس کمیونٹی کے نمائندوں اسلم بھلی‘ میاں تنویر ریاض ‘ چوہدری محمد بوٹا ‘ چوہدری محمد اصغر ‘ محمود عالم جٹ ‘ رانا سکندر اعظم و دیگر نے شرکت کی ۔ ڈپٹی کمشنر نے کہا کہ حکومت پنجاب نے پتنگ بازی کے باعث حالیہ المناک حادثات کا سختی سے نوٹس لیا اور ضلعی انتظامیہ و پولیس کو اس خونی کھیل کی روک تھام کے لئے بھر پور انسدادی و قانونی اقدامات کرنے کی ہدایت کی ہے لہذا پتنگیں / ڈوریں تیار و ذخیرہ کرنے ‘ ان کی نقل و حرکت ‘ خرید و فروخت اور پتنگ بازی کے خلاف زیرٹالرنس ہے اور خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف جارحانہ کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ انسدادی اقدامات کی کامیابی کے لئے بزنس کمیونٹی سمیت سول سوسائٹی کے افراد کی معاونت ناگزیر ہے لہذا وہ پتنگ و ڈور سازی کے گھناؤنے کاروبار کو ختم کرنے اور ایسے کارخانوں / ورکشاپس / دکانوں کی نشاندہی کریں تاکہ ان کی مکمل طور بیخ کنی ہو سکے ۔ ڈپٹی کمشنر نے بتایا کہ اگرچہ پولیس نے گزشتہ ڈیڑھ ماہ میں انسداد پتنگ بازی قانون کے تحت ہزاروں کی تعداد میں مقدمات کے اندراج اور ملزمان کی گرفتاری عمل میں آئی ہے لیکن اس قبیح فعل کا مکمل خاتمہ نہیں ہو سکا لہذا شہری بھی تعاون کا مظاہرہ کرتے ہوئے پتنگیں و ڈوریں تیار کرنے والوں کی نشاندہی کریں تاکہ آئندہ کسی بھی المناک حادثہ کے رونما ہونے کا احتمال نہ ہو ۔انہوں نے کہاکہ پتنگ و ڈور سازی کے کارخانوں اور خرید و فروخت کے اڈوں کا سراغ لگانے کے لئے خفیہ نیٹ ورک کو مزید تیز کر دیا ہے اور ایسے غیر قانونی کاروبار ملوث عناصر پر مضبوط ہاتھ ڈالا جائے گا ۔ سی پی او اشفاق احمد خاں نے واضح کیا کہ حکومت پنجاب کی طرف سے بسنت منانے کی قطعا اجازت نہیں ہے لہذا پتنگ سازی و پتنگ بازی کے جرم کے ارتکاب سے گریز کیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ پتنگیں و ڈوریں بنانے کا فعل کاروبار نہیں بلکہ موت کا پھندا تیار کرنا ہے جسے کسی صورت برداشت نہیں کیا جا سکتا ۔ انہوں نے بزنس کیمونٹی پر زور دیا کہ وہ پتنگ و ڈور سازی یا اس کا بیوپار کرنے والوں کا بائیکاٹ کرتے ہوئے ایسی کالی بھیٹروں کو بے نقاب کریں تاکہ آئندہ کسی کا لخت جگر ان کے خونی کاروباری کی بھینٹ نہ چڑھے ۔ انہوں نے کہا کہ پتنگ بازی کے ساتھ ساتھ ہوائی فائرنگ کرنے والے بھی قانون کی زد میں آئیں گے ۔ انہوں نے بتایا کہ ضلعی پولیس نے گزشتہ ڈیڑھ ماہ کے دوران پتنگ و ڈور سازی / خرید و فروخت کرنے والے 12 سو 47 ۔افراد کے خلاف مقدمات درج اور 1273 کو گرفتار کیا گیا اسی طرح 43859 پتنگیں ‘3025 ڈوریں اور 649 چرخیاں قبضہ میں لی گئیں ۔بزنس کمیونٹی کے نمائندوں نے پتنگ بازی کے باعث دلخراش واقعات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس غیر قانونی فعل کے سدباب کے لئے بھرپورتعاون کیاجائے گااورضلعی انتظامیہ و حکومت پنجاب کے ان سنجیدہ انسدادی اقدامات کو کامیاب بنائیں گے۔

Related posts