فیصل آباد کے تھانوں میں جعلی تھانیداروں کی حکمرانی‘ اصلی کھڈے لائن


فیصل آباد(نیوزلائن)فیصل آباد کے تھانوں میں اصلی تھانیدار کھڈے لائن لگے ہوئے ہیں جبکہ جعلی تھانیدار حکمرانی کر رہے ہیں۔ اصلی تھانیدار انویسٹی گیشن میں ہو یا آپریشنز میں ‘ اس کی بجائے جعلی تھانیدار ے پاس زیادہ اختیارات ہیں۔ ایس ایچ او ‘ تھانے کے منشی ‘ فرنٹ ڈیسک عملے ‘ انچارج انویسٹی گیشن کا زیادہ تر رابطہ جعلی تھانیدار سے ہی ہوتا ہے ‘ اصلی تھانیدار افسروں کے دفاتر اور عدالتوں میں پیشی کے علاوہ بہت کم نظر آتے ہیں۔نیوزلائن کے مطابق فیصل آباد کے تھانوں میں جعلی تھانیداروں کی بہت بڑی تعداد خدمات سرانجام دے رہی ۔ تھانوں میں تفتیشی کی نشست عام طور پر جعلی تھانیدار ہی سنبھالے ہوتے ہیں۔ یہ جعلی تھانیدار تفتیشی کی جگی انویسٹی گیشن اور انکوائریاں بھی کرتے ہیں۔ ایس ایچ او کیلئے ’’کارخاص‘‘ کی ذمہ داریاں نبھاتے ہیں۔ ایس ایچ اوز اور تھانے کے عملے کے مابین ’’پل‘‘ کا کردار نبھاتا ہے۔ فرنٹ ڈیسک عملے کیساتھ بھی کوآرڈی نیشن کرتا ہے جبکہ منشی بھی اسی کے توسط سے ایس ایچ او اور اصلی تھانیداروں کیساتھ کارسپانڈنس کرتا ہے۔اصلی تھانیدار اکثر تھانوں سے غائب اور اعلیٰ افسران کے دفاتر‘ عدالتوں میں پیشیوں اور تھانوں کے درمیان شٹل کاک بنے ہوتے ہیں مگر یہ جعلی تھانیدار اکثر وقت تھانے میں موجود اور پبلک ڈیلنگ کی ذمہ داریاں نبھا رہے ہوتے ہیں۔تھانوں میں تفتیش کا عمل تو زیادہ تر جعلی تھانیدار ہی نبھاتے ہیں ۔ تھانوں میں ایس ایچ اوز موجود ہوتے ہوئے بھی غائب ملتے ہیں۔فیصل آباد کے اکثر تھانوں میں ایس ایچ اوز اپنے دفاترمیں بیٹھنے سے احتراز کرتے ہیں اور دفاتر کی بجائے دفاتر سے ملحقہ ’’خاص‘‘ کمروں میں چھپ کر بیٹھے رہتے ہیں ۔ ایس ایچ او کا نمائندہ بن کر اس خاص کمرے کے باہر براجمان جعلی تھانیدار (کارخاص) ایس ایچ اوز سے ملنے آنے والوں کو ڈیل کرتے ہیں اور ان کا مکمل انٹرویو کرکے ضرورت محسوس کرنے پر ایس ایچ او کی طرف ’’ریفر‘‘کرتے ہیں وگرنہ زیادہ تر معاملات کو وہ خود ہی ڈیل کرتے اور منشی ‘ فرنٹ ڈیسک‘ تفتیشی عملے کو بھجوا دیتے ہیں۔ ایس ایچ او سمیت کسی بھی اصلی تھانیدار کو بھی تھانے کے بہت سے معاملات کا علم نہیں ہوتا مگر کارخاص اور جعلی تھانیدارز تمام صورتحال سے آگاہ اور ہر معاملے میں اصلی تھانیداروں کے ممدومعاون ثابت ہوتے ہیں۔

Related posts

Leave a Comment