مارکیٹ کمیٹی حکام کی مجرمانہ غفلت سے خزانے کو کھربوں کا نقصان


فیصل آباد(ندیم جاوید) مارکیٹ کمیٹی فیصل آباد کے حکام کی مجرمانہ غفلت کی وجہ سے قومی خزانے کو کھربوں روپے کا نقصان پہنچ چکا ہے۔ درجنوں یونٹ مارکیٹ کمیٹی نے رجسٹرڈ نہیں کئے جبکہ درج یونٹس کی پیداواری استعداد کار میں انتہائی کم اندراج کرکے ان سے حاصل ہونیوالے فیس کی مد میں خزانے کو بھاری نقصان پہنچایا جا رہا ہے۔نیوزلائن کے مطابق مارکیٹ کمیٹی فیصل آباد کے حکام قومی خزانے کا تحفظ کرنے اور اسے نقصان سے بچانے کیلئے اقدامات کرنے میں بری طرح ناکام ہیں۔ مارکیٹ کمیٹی کے حکام نے رجسٹرڈ یونٹس کی انتہائی کم پیداواری استعداد ظاہر کررکھی ہے۔ جبکہ بہت بڑی تعداد میں یونٹس کا مارکیٹ کمیٹی کے ساتھ اندراج ہی نہیں ہے۔ ریکارڈ کے مطابق مارکیٹ کمیٹی میں درج ایک یونٹ کی استعداد کار 1962کی پیداواری صلاحیت کے مطابق رجسٹرڈ ہے اور نصف صدی گزر جانے کے باوجود اس میں اضافہ نہیں کیا گیا جبکہ حقیقت میں اس کی استعداد بہت زیادہ ہوچکی ہے۔ کئی دہائیوں سے پیداواری یونٹس کی استعداد کار ریکارڈ میں نہیں بڑھائی گئی ۔ سیاسی چیئرمین بھی مارکیٹ کمیٹی کے کاموں میں اثر انداز ہوتے رہے اور انہیں پیداواری یونٹس کیخلاف اقدامات سے روکتے رہے۔ یونٹس کا اندراج نہ ہونے سے ان سے ریونیو کلیکشن نہیں کی جاتی اور اپنا’’مال پانی‘‘ بنا کر مارکیٹ کمیٹی حکام اسے ٹیکس چھوٹ دے دیتے ہیں۔ جبکہ کم استعداد کار بھی کم ریونیو کلیکشن کا باعث بنتی ہے۔ اس حوالے سے رابطہ کرنے پر مارکیٹ کمیٹی فیصل آباد کے سیکرٹری محمد یوسف کا کہنا تھا کہ ان کے علم میں نہیں ہے کہ کسی پیداواری یونٹ کی رجسٹریشن نہیں ہوئی یا پیداواری استعداد کم ظاہر کی گئی ہے۔ ایسا ہوا تو ذمہ داروں کیخلاف ایکشن ہوگا۔

Related posts