وفاقی وزیر کی خصوصی سفارش پر فیصل آباد کے پٹواری کا تبادلہ


فیصل آباد(ندیم جاوید)مسلم لیگ ن کی ’’پٹواری پالیسی‘‘کو شدید تنقید کا نشانہ بنانے والی پاکستان تحریک انصاف کے وزراء نے بھی ’’پٹواری پالیسی‘‘اختیار کر لی ہے۔ پی ٹی آئی نے وطیرہ تبدیل کیا ہے تو پٹواریوں نے قبلہ بدل کر ن لیگ سے پی ٹی آئی کو سدھار گئے ہیں۔نیوزلائن کے مطابق جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے پی ٹی آئی کے ایک سینئر رہنما اور وفاقی کابینہ کے رکن نے اپنی خصوصی سفارش پر فیصل آباد کے ایک پٹواری کا اس کے من پسند علاقے میں تبادلہ کروادیا۔ذرائع کے مطابق فیصل آباد کے چک نمبر 5ج ب میں پٹواری کے تبادلے کیلئے وفاقی کابینہ کے رکن نے خود سفارش کی اور ڈی سی کو مجبور کرکے راشد سنگھیڑا نام کے پٹواری کو اس گاؤں کا پٹواری لگوایا۔ پٹواری راشد سنگھیڑا کے بارے میں سامنے آیا ہے کہ وہ دس برس تک سابق وزیر قانون رانا ثناء اللہ اور ن لیگی ایم پی اے ظفر اقبال ناگرہ کاچہیتاپٹواری رہا ہے اور اس کی تمام تر تعیناتیاں ان کی پسند اور سفارش پر ہوتی رہی ہیں۔ پٹواری راشد کی مدت ملازمت کا زیادہ تر دورانیہ اسی علاقے میں رہا ہے جس کی بڑی وجہ ن لیگی ارکان اسمبلی کی پشت پناہی بتائی جاتی رہی ہے۔ن لیگی رہنماؤں کی پشت پناہی کے باعث طویل عرصے تک چک نمبر 5ج ب میں تعینات رہنے والے پٹواری کا نگران دور میں ٹرانسفر ہوا تھا کہ پی ٹی آئی حکومت آتے ہی وفاقی کابینہ کے رکن کی سفارش پر دوبارہ اسی علاقے میں آتعینات ہوا۔نیوزلائن کے مطابق پاکستان تحریک انصاف نے ہمیشہ مسلم لیگ ن کے پٹواری کلچر کی مخالفت کی ہے اور اسے شدید تنقید کا نشانہ بناتی رہی ہے۔ مگر اب جبکہ پی ٹی آئی اقتدار میں آئی ہے تو ن لیگ کے اسی پٹواری کلچر کو خود اپنائے ہوئے ہے۔ اس حوالے سے چک نمبر 5ج ب کے پٹواری راشد سنگھیڑا سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ اس نے کوئی غلط کام نہیں کیا۔ اسے دور دراز پھینکا گیا تھا ۔ اس کا گھر یہاں ہے تو اسے کام کرنے میں آسانی ہوتی ہے۔ اس کیلئے کسی اہم سیاسی رہنما سے فون کروا لینا کوئی جرم نہیں ہے۔ اس کا کہنا تھا کہ اس کا ننھیال ملتان کے قریب جلال آباد میں رہتا ہے۔ ہماری فیملی کا آٹھ ‘ دس ہزار ووٹ ہے۔ ہمارے ووٹوں سے جیتنے والا وفاقی وزیر بن چکا ہے تو ہم نے اس سے ایک چھوٹی سی سفارش ہی کروائی ہے جو کوئی اتنا بڑا جرم نہیں ہے۔

Related posts