کالعدم تنظیموں کے مدارس’ سکول’ مساجد میں سرکاری ایڈمنسٹریٹر تعینات


فیصل آباد(احمد یٰسین) پنجاب حکومت نے فیصل آباد میں کالعدم تنظیموں کے مدارس ‘ مساجداور دیگر اثاثہ جات اور اداروں کا کنٹرول سنبھال لیا ہے اور ان میں ایڈمنسٹریٹر تعینات کردئیے ہیں۔ ان اداروں کو اب سرکاری کنٹرول میں چلایا جائے گا۔ نیوز لائن کے مطابق پنجاب حکومت نے فیصل آباد میں دو کالعدم تنظیموں جماعت الدعوة اور فلاح انسانیت فاؤنڈیشن کے مدارس’ سکولوں’ ڈسپنسریوں’ ایمبولینس اور مساجد کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔ ان مقامات سے کالعدم تنظیموں کے افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے تاہم عملے کو حکومتی کنٹرول میںکام کرنے یا ادارہ چھوڑ دینے کا آپشن دیا جا رہا ہے۔ نیوز لائن کے مطابق نشاط آباد پل کے ساتھ واقع مرکز خیبر کو ضلعی انتظامیہ نے اپنے کنٹرول میںلے لیا ہے۔ وہاں موجود جماعت الدعوة کے تمام افراد کو حراست میں لے لیا گیاہے۔ مرکز خیبر میں موجودجماعت الدعوة کے مدرسہ اور مسجد کا کنٹرول زونل خطیب اوقاف قاری فتح محمد کو ایڈمنسٹریٹر مقرر کیا گیا ہے۔مرکز خیبر میں ہی موجود گرلز و بوائز سکولوں کو ایجوکیشن اتھارٹی کے حوالے کردیا گیا ہے اور وہاں ڈی ای او ایم ای ای انور پنسوتہ کو ایڈمنسٹریٹر لگایا گیا ہے۔ مرکز خیبر میں ہی موجود ایف آئی ایف کی ڈسپنسری کو ریسکیو 1122کے حوالے کردیا گیاہے۔ کالعدم جماعت الدعوة کے 58گ ب ڈھیسیاں میں واقع مدرسہ اور مسجد کا کنٹرول بھی ضلعی انتظامیہ نے سنبھال لیا ہے۔ اس کا ایڈمنسٹریٹر ڈسٹرکٹ منیجر اوقاف محسن حسنین کو مقرر کیا گیا ہے۔ ملت ٹاؤن میں تھانہ ملت ٹاؤن کے قریب واقع جماعت الدعوة کے مدرسہ و مسجد کا کنٹرول بھی ضلعی انتظامیہ نے سنبھا ل لیا ہے۔ اس کا ایڈمنسٹریٹر زونل خطیب قاری فتح محمد کو بنایا گیا ہے۔ ڈھڈی والا میں واقع مدرسی و مسجد کا ایڈمنسٹریٹر بھی زونل خطیب کو ہی بنایا گیا ہے۔ تاندلیانوالہ میں واقع جے یو ڈی کے سکول کا ایڈمنسٹریٹر اے ای او محمد طارق کو بنایا گیا ہے۔ اے ای او اواگت افتخار علی کو ڈھیسیاں میں واقع جماعت الدعوة کے سکول کا ایڈمنسٹریٹر مقرر کیا گیا ہے۔ فیصل آباد کے مختلف علاقوں میں قائم ایف آئی ایف کی 29ڈسپنسریوں کو بھی ضلعی انتظامیہ نے اپنے کنٹرول میں لے لیا ہے۔ ڈسٹرکٹ ہیلتھ اتھارٹی کے مختلف افسران کو ان کا ایڈمنسٹریٹر مقرر کیا گیا ہے۔ ایف آئی ایف کی دس ایمبولینس بھی شہر میں ورکنگ کررہی تھیں انہیں ریسکیو 1122کے حوالے کردیا گیا ہے۔ضلعی انتظامیہ نے جماعت الدعوة اور فلاح انسانیت کے اداروں کا کنٹرول تو سنبھال لیا ہے اور ان سے وابستہ دونوں کالعدم تنظیموں کے عہدیداروں اور کارکنوں کو بھی حراست میں لے لیا ہے۔ تاہم وہاں کام کرنے والے عملے کو فارغ کرکے بے روزگار نہیں کیا گیا ۔ انہیں سرکاری کنٹرول میں کام جاری رکھنے یا مستعفی ہونے کا آپشن دیا گیا ہے۔

Related posts