چن ون اور چناب لمیٹڈ33کروڑ روپے کے ٹیکس نادہندہ نکلے


فیصل آباد(ندیم جاوید)معروف صنعتی امپائر ’’چناب گروپ‘‘ 33کروڑروپے سے زائد کا ٹیکس نادہندہ نکلا۔ایف بی آر حکام نے چناب گروپ کے ٹیکس نادہندہ ہونے کی تصدیق کی ہے جبکہ چناب گروپ کے چیف ایگزیکٹوکا کہنا ہے کہ ٹیکس والوں کیساتھ صنعتکاروں کے ایسے معاملات چلتے رہتے ہیں۔ نیوزلائن کے مطابق ’’چناب گروپ ‘‘ کے نام سے کام کرنے والا صنعتی گروپ بڑے ٹیکس نادہندگان میں شامل پایا گیا ہے۔چناب گروپ کے چن ون اور چناب لمیٹڈ کے نام سے دو ادارے ایف بی آر کے پاس رجسٹرڈ ہیں۔دو ارب روپے سے زائد کے شیئر کی مالیت رکھنے والے چناب گروپ کے دونوں رجسٹرڈ ادارے چن ون اور چناب لمیٹڈ دونوں ہی ٹیکس نادہندگی میں ملوث پائے گئے ہیں۔چن ون کا این ٹی این نمبر 11773090اور چناب لمیٹڈ کا این ٹی این نمبر 06883770 طویل عرصے سے ٹیکس نادہندگان کی لسٹ میں شامل ہیں۔ایف بی آر ریجنل ٹیکس آفس فیصل آباد کے انکم ٹیکس زون کا سب سے بڑا نادہندہ ہی چن ون ہے ۔ جبکہ ود ہولڈنگ ٹیکس کے نادہندگان میں بھی چن ون کا نام ٹاپ تھری میں شامل ہے۔ایف بی آرکے ریکارڈ کے مطابق چن ون اور چناب لمیٹڈ 33کروڑ48لاکھ روپے سے زائد کے ود ہولڈنگ اور انکم ٹیکس کے نادہندہ ہیں۔ اس کے علاوہ سیلز ٹیکس اور متعدد دیگر معاملات میں بھی دونوں ادارے نادہندہ ہیں۔مختلف سالوں میں چناب گروپ کے اداروں کے ذمہ ٹیکس واجب الادا نکلا ۔آر ٹی او نے متعدد مرتبہ نوٹس جاری کئے مگر چناب گروپ نے ٹیکس ادا نہ کیا جبکہ آر ٹی او کی ہی بعض کالی بھیڑوں کیساتھ ملی بھگت کرکے تاخیری حربے استعمال کرنا شروع کر دئیے۔بڑے ٹیکس نان دہندگان کے حوالے سے ایف بی آر کی پالیسی اور ریجنل ٹیکس آفس فیصل آباد کی کارروائیاں جاننے کیلئے چیف کمشنر فیصل آبادڈاکٹر اکرم سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ وہ اس معاملے میں ایک لفظ بھی نہیں بول سکتے۔ایڈیشنل کمشنر ہیڈ کوارٹر بلال احمدسے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے چن ون اور چناب لمیٹڈ کے نادہندگا ن کی لسٹ میں شامل ہونے کی تصدیق کی اور کہا کہ ان کے کیسز کا فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے ۔ حتمی فیصلہ ہونے پر ہی ان کے خلاف کوئی کارروائی عمل میں لائی جا سکتی ہے۔اس حوالے سے مؤقف لینے کیلئے چناب گروپ کے ڈائریکٹر آپریشنز فرحان لطیف اور دیگر ڈائریکٹرز میاں جاوید اقبال‘ محمد نعیم ‘ فیصل لطیف‘ ذیشان لطیف‘ طارق ایوب خان سے رابطہ کیا گیا مگر ان سے رابطہ نہ ہو سکا۔اس حوالے سے چناب گروپ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او)میاں محمد لطیف سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ یہ کوئی بڑی بات نہیں ہے ۔صنعتکاروں اور ٹیکس دفاتر کے مابین یہ سلسلہ تو چلتا ہی رہتا ہے۔اسے زیادہ سیریس نہیں لینا چاہئے۔ان کا کہنا تھا کہ جس طرح کے دگرگوں ملکی حالات ہیں اس میں تو صنعت انتہائی خراب صورتحال کا شکار ہے ایسے میں صنعتکار کیسے ٹیکس دے سکتے ہیں

Related posts

Leave a Comment