جی سی یونیورسٹی کا ایف ایم ریڈیو10سالوں میں بھی نہ چل سکا


فیصل آباد(ندیم جاوید)جی سی یونیورسٹی فیصل آباد نے سست روی کی عمدہ مثال قائم کردی۔ دس برس پہلے منظور کروائے گئے ایف ایم ریڈیو کو ایک دہائی گزرنے کے باوجود شروع نہ کرسکی۔ وائس چانسلر کی عدم توجہی اورچند لاکھ فنڈز کی عدم فراہمی کے باعث جی سی یونیورسٹی کا ایف ایم ریڈیو سٹیشن شروع نہیں ہو پا رہا اور طلبہ کیمپس کی خبروں سے محروم ہیں۔ تفصیل کے مطابق جی سی یونیورسٹی فیصل آباد نے سال 2007میں اپنا ایف ایم ریڈیو سٹیشن شروع کرنے کا اعلان کیا۔وائس چانسلر ڈاکٹر عارف علی زیدی کی منظوری سے یونیورسٹی کے میڈیا سٹڈیز ڈیپارٹمنٹ نے پیمرا سے ایف ایم ریڈیو کا لائسنس بھی حاصل کرلیا۔ مگر اسی دوران میں ہی وائس چانسلر ڈاکٹر عارف علی زیدی یونیورسٹی کی ہوشربا اور منفی ’’سیاست ‘‘اور بیرونی سیاسی مداخلت سے دلبرداشتہ ہو کر مستعفی ہوگئے۔ اور پھر چراغوں میں روشنی نہ رہی‘نئے آنے والے وائس چانسلرز کی ترجیحات شائد کچھ اور ہی تھیں۔ کیمپس کی خبریں طلبہ اور شہریوں تک پہنچانا ان کی ترجیحات میں شامل نہ تھا۔سابق وی سی ڈاکٹر شاہد محبوب رانا تو آئے ہی عارضی طور پر اورمختصر وقت کیلئے تھے‘ انہیں بہت سے معاملات میں اخراجات کرنے کا اختیار بھی حاصل نہیں تھا مگر سابق وائس چانسلر ڈاکٹر ذاکر حسین نے تو دانستہ طلبہ اور شہریوں کو یونیورسٹی کے حالات سے بے خبر رکھنے کی پالیسی اپنائے رکھی۔یونیورسٹی کا کیمپس ریڈیو پیمرا سے منظور ہو چکا ہے۔ صرف چند لاکھ روپے کے فنڈز میسر نہ ہونے سے کیمپس ریڈیو شروع نہیں ہو پا رہا۔ پانچ ارب روپے سے زائد کا بجٹ رکھنے والے ادارے میں صرف چند لاکھ روپے کی عدم فراہمی کی وجہ سے کیمپس ریڈیو کا اجراء رکا ہوا ہیجو طلبہ کے حصول معلومات کے حق پر ڈاکہ جبکہ یونیورسٹی کیلئے شرمندگی کا باعث ہے۔

Related posts