ایڈن آرچرڈ بنانے والے ریاسٹ ڈوگر بھی پراپرٹی فراڈ میں ملوث نکلے


فیصل آباد(نیوزلائن) فیصل آباد کے بڑے ڈویلپر ریاست ڈوگر کے بھی پراپرٹی فراڈ میں ملوث ہونے کی رپورٹس سامنے آئی ہیں۔ ان کیخلاف انٹی کرپشن اور نیب میں تحقیقات بھی کی جارہی ہیں۔نیوزلائن کے مطابق ایڈن آرچرڈ بنانے والے معروف ڈویلپر ریاست علی ڈوگر بھی پراپرٹی فراڈمیں ملوث پائے جا رہے ہیں۔ ان کی متعدد کالونیاں ایف ڈی اے نے منظور نہیں کیں اور انہوں نے غیرقانونی رہائشی سکیمیں ہی عوام میں فروخت کردی ہیں۔غیرقانونی رہائشی سکیموں کو فروخت کرنے کیلئے انہوں نے جھوٹ کا بھی سہارا لیا اور عوام کیاتھ دھوکے بازی کرتے رہے۔ ایف ڈی اے ریکارڈ میں سامنے آیا ہے کہ ریاست ڈوگر کی ڈویلپ کی ہوئی ایڈن گارڈن نواب بلاک پنج پلیاں روڈ اوراسی سے ملحقہ ایگزیکٹو بلاک غیرقانونی ہیں اور ان کی ایف ڈی اے نے ابھی تک منظوری نہیں دی۔ قانون کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے ریاست ڈوگر نے یہ دونوں کالونیاں بنائیں اور عوام کو دھوکے میں رکھ کر فروخت کردیں۔ ریاست ڈوگر کی ہی ایڈن ویلی 204ر ب بھی غیرقانونی اور نامنظور شدہ رہائشی سکیموں کی لسٹ میں شامل ہے۔نیوز لائن کے مطابق ایڈن آرچرڈ ‘ ایڈن گارڈن اور ایڈن ولاز کے معاملات بھی مکمل طور پر درست نہیں ہیں اور منظور کروائے گئے نقشے اور زمینی حقائق میں بہت فرق ہے مگر اس کے باوجود ایف ڈی اے نے اس کی منظوری دیدی۔نیوزلائن کے مطابق غیرقانونی رہائشی سکیمیں بنانے اور عوام کیساتھ کروڑوں روپے کا فراڈ کرنے کے الزامات کے تحت ریاست ڈوگر اور متعدد دیگر ڈویلپرز اور ایف ڈی اے حکام کیخلاف انٹی کرپشن میں تحقیقات ہو رہی ہیں جبکہ نیب نے بھی ریاست ڈوگر کیخلاف تحقیقات شروع کر رکھی ہیں۔ایف ڈی اے حکام نے نیب کی تحقیقات میں ریاست ڈوگر کے ایڈن گارڈن نواب بلاک پنج پلیاں روڈ اوراسی سے ملحقہ ایگزیکٹو بلاک اور ایڈن ویلی 204ر ب کو غیرقانونی قرار دیا ہے اور ان کے معاملات کو درست نہ ہونا تسلیم کیا ہے۔ نیوزلائن کے مطابق غیرقانونی رہائشی سکیموں میں فیصل آباد کے عوام کیساتھ بڑے پیمانے پر فراڈ کیا گیا ہے اور عوام کے اربوں روپے لوٹنے والے عوام کو سہولیات دینے سے انکاری ہیں۔

Related posts