ریاست ڈوگر ایف ڈی اے کی زیر سرپرستی لوٹ مارمیں مصروف


فیصل آباد(نیوزلائن) غیرقانونی رہائشی سکیمیں بنا کر عوام کو لوٹنے والے ریاست ڈوگر کو ایف ڈی اے افسران کی سرپرستی حاصل ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔ غیرقانونی رہائشی سکیمیں بنا کر لوٹ مار کرنے کا علم ہونے کے باوجود ایف ڈی اے حکام اس کے خلاف کوئی کارروائی سے گریزاں ہیں جبکہ اس کی ایک کالونی کو منظوری سرٹیفکیٹ دے کر دیگر کالونیوں میں لوٹ مار کو نظر انداز کردیا گیا ہے۔ نیوزلائن کے مطابق غیرقانونی رہائشی سکیمیں بناکر عوام سے اربوں روپے لوٹنے والے اپنے تائیں بڑے ڈویلپر ریاست ڈوگر کو ایف ڈی اے حکام کی سرپرستی حاصل ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔ ریاست ڈوگر کی متعدد رہائشی سکیمیں غیرقانونی ہیں ۔ فیصل آباد ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی دستاویزات سے ثابت ہوتا ہے کہ ریاست ڈوگر کی ڈویلپ کی ہوئی ایڈن گارڈن نواب بلاک پنج پلیاں روڈ اوراسی سے ملحقہ ایڈن گارڈن ایگزیکٹو بلاک غیرقانونی ہیں ۔ان کی ایف ڈی اے سے منظوری لئے اورکالونی میں قوانین کی رو سے لازمی سہولیات فراہم کئے بغیر ہی عوام کو فروخت کردیا گیا۔ ریاست ڈوگر نے قانون کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے یہ دونوں کالونیاں بنائیں اورایف ڈی اے حکام کی زیرسرپرستی عوام کو دھوکے میں رکھ کر دونوں کو فروخت کردیا۔ریاست ڈوگر کی ہی ڈویلپ کردہ ایڈن ویلی 204ر ب بھی غیرقانونی اور نامنظور شدہ رہائشی سکیموں کی لسٹ میں شامل ہے۔ایف ڈی اے حکام کیساتھ ملی بھگت کرکے ریاست ڈوگر نے اس غیرقانونی سکیم میں بھی مطلوبہ سہولیات فراہم نہیں کیں اور اسے عوام کو مہنگے داموں فروخت کردیا۔ذرائع کے مطابق ریاست ڈوگر کے ایف ڈی اے کے ڈی جی اور ایڈیشنل ڈائریکٹر سمیت اعلیٰ افسران کیساتھ قریبی تعلقات ہیں جنہیں استعمال کرکے وہ غیرقانونی سکیمیں تیار کرتے ہیں اور عوام کو بغیر سہولیات فراہم کئے فروخت کرکے لوٹ مار کرتے ہیں۔ریاست ڈوگر کی لوٹ مار کی انٹی کرپشن میں بھی تحقیقات ہورہی ہیں جبکہ ایک وفاقی ادارہ بھی ان کی لوٹ مار کے حوالے سے انکوائری کررہا ہے۔نیوز لائن کے مطابق ریاست ڈوگر کی ڈویلپ کردہ ایڈن آرچرڈ ‘ ایڈن گارڈن اور ایڈن ولاز کے معاملات بھی مکمل طور پر درست نہیں ہیں اور منظور کروائے گئے نقشے اور زمینی حقائق میں واضح فرق ہے مگر اس کے باوجود ایف ڈی اے نے اس کی منظوری دیدی۔نیوزلائن کے مطابق غیرقانونی رہائشی سکیمیں بنانے اور عوام کیساتھ کروڑوں روپے کا فراڈ کرنے کے الزامات کے تحت ریاست ڈوگر اور متعدد دیگر ڈویلپرز اور ایف ڈی اے حکام کیخلاف اعلیٰ سطحی تحقیقات ہو رہی ہیں ایف ڈی اے حکام نے ایک وفاقی تحقیقاتی ادارے کو بھجوائی گئی اپنی رپورٹ میں ریاست ڈوگر کے ایڈن گارڈن نواب بلاک پنج پلیاں روڈ اوراسی سے ملحقہ ایگزیکٹو بلاک اور ایڈن ویلی 204ر ب کو غیرقانونی قرار دیا ہے اور ان کے معاملات کو درست نہ ہونا تسلیم کیا ہے۔مگر اس کے باوجود ڈی جی اور دیگر اعلیٰ حکام تک پہنچ رکھنے والے ریاست ڈوگرکیخلاف ایف ڈی اے کوئی کارروائی کرنے سے گریزاں ہے۔

Related posts