خالدمسعود فروکہ خواجہ سرا شناختی کارڈ کمیٹی کے انچارج مقرر


فیصل آباد(نیوزلائن)حکومت نے تمام اضلاع میں خواجہ سراؤں کے شناختی کارڈز بنانے کو یقینی بنانے کیلئے خصوصی کمیٹیاں بنا دی ہیں۔ فیصل آباد میں بنائی گئی کمیٹی کا سربراہ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر جنرل خالد مسعود فروکہ کو بنایا گیا ہے۔ اس حوالے سے معاملات کا جائزہ لینے کیلئے خالد مسعود فروکہ کی سربراہی میں خصوصی اجلاس ہوا۔اجلاس میں خواجہ سراؤں کو درپیش مسائل کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں چیف ایگزیکٹو ہیلتھ ڈاکٹر ظفر عباس‘ڈپٹی ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ عبدالحمید‘ڈپٹی ڈائریکٹر انفارمیشن سبحان علی‘ صدر ڈسٹرکٹ بار ملک امجد حسین‘ اسسٹنٹ ڈائریکٹر نادرا محمد سہیل‘ و دیگر متعلقین کے علاوہ خواجہ سراؤں کے گروچنداشیرنی‘میڈم پیارائے نے خصوصی طور پر شرکت کی۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ ضلعی عمل درآمد کمیٹی خواجہ سراؤں کے شناختی کارڈز کے اجراء میں درپیش مسائل کو حل کرنے کیلئے بنائی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ محکمہ سماجی بہبود کے آفس میں ’’خصوصی سیل‘‘قائم کردیا گیا ہے جہاں پر خواجہ سرا متعلقہ کوائف کے ساتھ اپنی رجسٹریشن کراسکتے ہیں۔اجلاس کے دوران کالد مسعود فروکہ نے کہا کہ خواجہ سرا ہمارے معاشرے کا اہم حصہ ہیں جن کی عزت وتکریم کو ہر صورت برقرار رکھا جائے گا ۔ بطور پاکستانی شہری انہیں قومی شناختی کارڈز کے اجراء کے لئے منظم حکمت عملی اختیار کی جائے گی تاکہ وہ سرکاری ملازمتوں کے حصول کے مواقع کے ساتھ حکومت کی دیگر فلاحی پالیسیوں سے فائدہ اٹھا سکیں۔انہوں نے خواجہ سراؤں کے نمائندوں سے کہا کہ وہ اپنی کمیونٹی میں قومی شناختی کارڈ کے حصول کے لئے زیادہ سے زیادہ آگاہی پیدا کریں ۔اس ضمن میں ضلعی انتظامیہ کی طرف سے انہیں ہرممکن معاونت فراہم کی جائے گی۔نادرا کے نمائندہ نے اس موقع پر بتایا کہ پہلے مرحلے میں خواجہ سراؤں کے گرو حضرات کی رجسٹریشن کی جارہی ہے جن کی تصدیق محکمہ سماجی بہبود کی طرف سے کی جائے گی جبکہ اگلے مرحلے میں گروحضرات کے چیلے خواجہ سراؤں کی رجسٹریشن ان کی سرپرستی میں کی جائے گی۔محکمہ سماجی بہبود کے نمائندہ نے بتایا کہ گرو حضرات کی رجسٹریشن کے امور کو منظم بنانے کے لئے خصوصی سیل کام کررہا ہے ۔اس ضمن میں مجوزہ درخواست فارم جاری کئے جارہے ہیں جو بیان حلفی کے ساتھ جمع کرائے جائیں گے جن کی تصدیق کا نظام بھی وضع کرلیا گیاہے۔صدر ڈسٹرکٹ بارایسوسی ایشن ملک امجد حسین نے خواجہ سراؤں کو قومی شناختی کارڈ کے اجراء کے سلسلے میں مکمل قانونی معاونت فراہم کرنے کا یقین دلایا اور کہا کہ اس طبقے کی فلاح وبہبود اوربھلائی کے سلسلے میں وسیع بنیادوں پر اقدامات ضروری ہیں تاکہ یہ پاکستانی شہری کی حیثیت سے عزت ووقار کے ساتھ زندگی بسرکرسکیں۔

Related posts