تعلیمی بورڈزچیئرمینوں کی تنظیم کا ایمپلائز ایسوسی ایشن پر پابندی کا فیصلہ

فیصل آباد (احمد یٰسین) پنجاب کے تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن نے ملازمین کی ایسوسی ایشن پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور اس کو ”تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن“ پی بی سی سی کے اجلاس کے ایجنڈے میں شامل کرلیا ہے۔ تفصیل کے مطابق پنجاب بھر کے تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن ”پنجاب بورڈز کمیٹی آف چیئرمین“ نے تعلیمی بورڈوں کے ملازمین کی ایسوسی ایشن ”ایجوکیشن بورڈز ایمپلائز ایسوسی ایشنز“ پر پابندی لگانے کا فیصلہ کر لیا ہے اور اس کو پی بی سی سی کے ایجنڈے میں شامل کرکے اس بارے سفارشات کی تیاری شروع کردی ہے۔ ذرائع کے مطابق پی بی سی سی نے اپنے گزشتہ اجلاس میں ایمپلائز ایسوسی ایشنزپر پابندی کے معاملے کو اپنے ایجنڈے میں رکھا اور اس بارے تمام ممبران سے تجاویز لے کر پابندی کی سفارشات تیار کروائیں۔ ایمپلائز ایسوسی ایشنز پر پابندی کیلئے پی بی سی سی کے چیئرمین سرگرم بتائے جاتے ہیں اور اس حوالے سے وہ مختلف شخصیات اور اداروں سے مشاورت بھی کر رہے ہیں۔ تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن کی طرف سے ایمپلائز ایسوسی ایشن پر مجوزہ پابندی کے فیصلے کو تعلیمی حلقوں میں حیرت کی نگاہ سے دیکھا جارہا ہے۔ بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن کی طرف سے ایمپلائز ایسوسی ایشن کے حوالے سے ایسے کسی بھی اقدام کے قانونی و اخلاقی پہلوؤں پر بحث ہورہی ہے۔ اسی حوالے سے چند ہفتے قبل یونیورسٹیوں میں اکیڈمک سٹاف کی ایسوسی ایشن کے شدید ترین مخالف وائس چانسلرز کی طرف سے ملکی سطح پر وائس چانسلرز کی ایسوسی ایشن کے قیام نے بھی محکمہ تعلیم کے عالی دماغوں کی فیصلہ سازی پر سوالیہ نشان ثبت کیا تھا اور اب تعلیمی بورڈز کے چیئرمینوں کی ایسوسی ایشن کی طرف سے ایمپلائز ایسوسی ایشنز پر پابندی کے مجوزہ اقدام نے ایک نئی بحث چھیڑ دی ہے۔

Related posts