حکومت کا فیصل آباد کے میگا پراجیکٹس کیلئے فنڈز فراہمی سے انکار

فیصل آباد (نیوز لائن) پنجاب حکومت نے فیصل آباد کے میگا پراجیکٹس کیلئے فنڈز فراہمی سے انکار کردیا۔ فنڈز کی عدم فراہمی کی وجہ سے فیصل آباد کی ڈویژنل و ضلعی انتظامیہ کامیگا پراجیکٹس پر کام شروع کروانے کا منصوبہ دھرا کا دھرا رہ گیا۔ نیوز لائن کے مطابق میاں شہباز شریف کی حکومت نے فیصل آباد میں متعدد میگا پراجیکٹس شروع کروائے تھے۔ چنیوٹ بازار میں پونے دو ارب روپے کی لاگت سے پارکنگ پلازہ کی تعمیر کا منصوبہ تھا۔ اس کا پلان منظور کیا جا چکا تھا اور پی سی ون بھی تیار ہو چکا تھا۔ حکومت ختم ہونے کی وجہ سے اس کیلئے فنڈز کا اجراء نہ ہوسکا۔ کنال روڈ پر کشمیر پل انڈر پاس کا منصوبہ بھی ایک ارب روپے کی لاگت کا پراجیکٹ تھا۔ اس کیلئے ابتدائی کام جاری تھا کہ حکومت بدل گئی اور حکومت بدلتے ہی کام روک دیا گیا۔ سمندری روڈ پر ناولٹی پل انڈر پاس کی تعمیر کا منصوبہ 80کروڑ روپے کی لاگت کا پراجیکٹ تھا مگر اس پر کام شروع ہی نہیں ہو سکا۔ ستیانہ روڈ پر حسیب شہید ہسپتال کی تعمیر کا منصوبہ بھی تیار کیا گیا تھا مگر ڈیڑھ ارب روپے کے اس منصوبہ کیلئے بھی فنڈز کا اجراء حکومت بدلنے کی وجہ سے التوا میں رہ گیا۔بیرون کارخانہ بازار پارکنگ پلازہ بنانے کیلئے بھی ڈیڑھ ارب روپے کا پراجیکٹ تیار کیا گیا تھا مگر وہ بھی ہنوز التواء کا شکار ہے۔ چلڈرن ہسپتال کی تعمیر بھی مسلم لیگ ن کی حکومت کے آخری دور میں رک گئی تھی اور ابھی تک رکی ہوئی ہے۔ فیصل آباد کی ڈویژنل و ضلعی انتظامیہ اور پی ٹی آئی قیادت کوشش کررہی تھی کہ چلڈرن ہسپتال کے توسیعی منصوبے‘پارکنگ پلازہ چنیوٹ بازار‘ کشمیر پل انڈر پاس اور حسیب شہید ہسپتال کیلئے کام شروع کروایا جائے۔ انتظامیہ نے چار وں میگاپروجیکٹس کیلئے ساڑھے تین ارب کے فنڈز فراہمی کی درخواست کی تھی۔جس کیلئے ضلعی و ڈویژنل انتظامیہ اور مقامی پی ٹی آئی قیادت نے مؤقف اختیار کیا تھا کہ عوامی بہبود کے چاروں میگا پروجیکٹ کی تکمیل نہ ہونے سے شہریوں کو شدید مسائل کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔تاہم پنجاب حکومت نے اس درخواست کو رد کردیا ہے اور رواں مالی سال کے دوران فنڈز فراہمی سے معذرت کی ہے۔ تاہم پی ٹی آئی قیادت امید ظاہر کر رہی ہے وہ فنڈز کی فراہمی یقینی بنائے گی۔

Related posts