رانا ثناءاللہ فرانسیسی فنڈنگ پراجیکٹ سے جگا ٹیکس لیتے رہے

فیصل آباد (احمد یٰسین) مسلم لیگ ن کے صوبائی صدر اور سابق صوبائی وزیر قانون رانا ثناءاللہ خاںفرانس کی فنڈنگ سے بننے والے فیصل آباد کے شہریوں کو صاف پانی کی فراہمی کے منصوبے کے فنڈز میں سے جگا ٹیکس وصول کرتے رہے۔ سالہا سال سے جاری جگا ٹیکس وصولی کا کام پی ٹی آئی حکومت بننے کے بعد بھی انہوں نے جاری رکھا۔ نیوز لائن کے مطابق سابق وزیر قانون رانا ثناءاللہ خاں کے حوالے سے سامنے آیا ہے کہ وہ فیصل آباد کے شہریوں کو صاف پانی کی فراہمی کے منصوبے میں سے بھی جگا ٹیکس وصول کرتے رہے۔ رانا ثناءاللہ خاں جس منصوبے میں سے جگا ٹیکس وصول کرتے پائے گئے ہیں وہ منصوبہ فیصل آباد کے شہریوں کو صاف پانی کی فراہمی کیلئے فرانس کی فنڈنگ سے شروع کیا گیا تھا۔ پنجاب میں وزیر اعلیٰ شہباز شریف کے بعد مضبوط ترین پوزیشن رکھنے والے رانا ثناءاللہ خاں نے سالہا سال تک اس منصوبے کے فنڈز میں سے جگا ٹیکس وصول کیا ۔ یہی نہیں انہوں نے پی ٹی آئی حکومت بننے کے بعد بھی ”ونسی پراجیکٹ“ کے فنڈز سے جگا ٹیکس وصول کرنے کا سلسلے کا جاری رکھا۔ نیوز لائن کو ملنی والی ایک سرکاری رپورٹ کے مطابق رانا ثناءاللہ خاں نے دسمبر 2018تک یہ جگا ٹیکس وصولی جاری رکھی ۔ اس معاملے کی اعلیٰ سطحی تحقیقات شروع کردی گئی ہیں اور رانا ثناءاللہ کے علاوہ انہیں جگا ٹیکس دینے والے افسران اور ”ونسی پراجیکٹ“ کے انچارج فقیر محمد کو بھی شامل تفتیش کیا جارہا ہے۔ امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ اس مقدمے میں بھی رانا ثناءاللہ خاں اور ایم ڈی واسا فقیر محمد اور دیگر ملوث افسران کو قید کی سزا کے علاوہ بھاری جرمانے کا بھی سامنا کرنا پڑے گا۔ اس معاملے میں رانا ثناءاللہ خاں اور ایم ڈی واسا فقیر محمد کے علاوہ مسلم لیگ ن کے متعدد رہنماو¿ں اور رانا ثناءاللہ کے دو قریبی عزیزوں کے نام بھی ملوث بتائے جارہے ہیں۔

Related posts