رانا ثناء کی دھوکے بازی: لیڈی ہیلتھ ورکرز کا دھرنا جاری


لاہور(نیوزلائن)لیڈی ہیلتھ ورکرز نے چیئرنگ کراس چوک مال روڈ پر مسلسل چوتھے روز بھی دھرنا جاری رکھا ،لیڈی ہیلتھ ورکرز اور حکومت کے درمیان مذاکرات کے دور کے باوجود ڈیڈ لاک بر قرار رہا جس کے باعث سیون کلب جانے والی خواتین کا وفد واپس مال روڈ پر آ گیا ،محکمہ لائیو سٹاک کے ملازمین نے اپنے مطالبات کے حق میں دوسرے روز بھی مال روڈ پر دھرنا دیا جس کی وجہ سے ملحقہ شاہراہوں پر ٹریفک کا شدید دباؤ بر قرار رہا ۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب بھر سے آئی ہوئی لیڈی ہیلتھ ورکرز نے اپنے مطالبات کے حق میں مسلسل چوتھے روز بھی پنجاب اسمبلی کے سامنے چیئرنگ کراس چوک میں دھرنا دیا ۔ گزشتہ روز بھی دھرنے میں شریک تین خواتین گرمی اور حبس کی وجہ سے بیہوش ہو ئیں جنہیں فوری طبی امداد دی گئی ۔اس موقع پر خواتین مظاہرین جھولیاں اٹھا اٹھا کر بدعائیں دیتی رہیں۔گزشتہ روز پولیس افسران نے مظاہرین سے مذاکرات کئے جو ناکام ہو گئے تاہم بعد ازاں سی سی پی او اور ڈی آئی جی آپریشنز سے دوبارہ مذاکرات کا دور ہوا جس میں پیشرفت ہوئی ۔ لیڈی ہیلتھ ورکرز کے وفد نے سیون کلب پر صوبائی وزیر قانون رانا ثنا اللہ کی سربراہی میں حکومتی ٹیم سے مذاکرات کر کے اپنے مطالبات پیش کئے ۔ اس دوران مذاکرات کی کامیابی اور مشترکہ پریس کا اعلان کیا گیا تاہم کچھ دیر بعد لیڈی ہیلتھ ورکرز مذاکرات سے اٹھ کر باہر آ گئیں اور اس دوران سی سی پی او اور ڈی آئی جی آپریشنز انہیں روکتے رہے۔ کنوینر رخسانہ انور کی سربراہی میں جانے والا خواتین کا وفد واپس دھرنے میں پہنچ گیا ۔ رخسانہ انور نے کہا کہ ہمیں جعلی دستاویزات دکھائی گئیں ۔ ہم طفل تسلیوں سے احتجاج ختم نہیں کریں گے بلکہ جب تک نوٹیفکیشن نہیں دیا جائے گا دھرنا جاری رہے گا ۔ محکمہ لائیو سٹاک کے ملازمین نے بھی سروس سٹرکچر سمیت اپنے دیگر مطالبات کے حق میں مال روڈ پر دھرنا جاری رکھا ۔ اس موقع مظاہرین اپنے مطالبات کے حق میں اور حکومت کے خلاف نعرے لگاتے رہے ۔

Related posts