پی ایس ایل میچ فکسنگ سازش میں بھارت کے ملوث ہونے کا انکشاف


اسلام آباد(رانا حامد یٰسین)پی ایس ایل میچ فکسنگ سکینڈل میں بھارت کے ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔ پاکستان پریمئر لیگ میں ہونے والی میچ و سپاٹ فکسنگ سازش کا مقصد پی ایس ایل کو مشکوک بنا کر ناکام کرنا ہے جبکہ اس میچ اور سپاٹ فکسنگ میں کئی ایک نامور کھلاڑی ملوث ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔ایسے کھلاڑیوں کے نام بھی سامنے آرہے ہیں جو کہ پی ایس ایل کا حصہ بھی نہیں ہیں۔ جبکہ عالمی جواری نیٹ ورک کا ساتھ دینے والے سازشی کھلاڑی کئی بڑے کھلاڑیوں کو جرم بے گناہی میں ہی پھنسانے کی کوشش بھی کر رہا ہے۔ذرائع کے مطابق پی ایس ایل کی مختلف ٹیموں کے 15کھلاڑی میچ اور سپاٹ فکسنگ کے حوالے سے پی سی بی انٹی کرپشن یونٹ کے ریڈار میں آچکے ہیں جبکہ فکسنگ میں عالمی جوا نیٹ ورک اور بھارتی جواریوں کے ملوث ہونے کے ثبوت بھی سامنے آرہے ہیں۔فکسنگ کے حوالے سے مشکوک سرگرمیوں پر پکڑے جانے والے شرجیل خان اور خالد لطیف نے قومی ٹیم کے سابق اوپننگ بلے باز ناصر جمشیدکا نام لیا ہے اور الزام عائد کیا ہے کہ مشکوک شخص سے ان کا رابطہ ناصر جمشید نے کروایا ہے۔ ذرائع کے مطابق خالد لطیف اور شرجیل خان گزشتہ برس بھی واچ لسٹ پر تھے مگر اس وقت ان کے خلاف کوئی ثبوت سامنے نہیں آیا تھا۔شرجیل اور خالد کے بعد محمد عرفان کا نام بھی مشکوک سرگرمیوں کے حوالے سے سامنے آیا۔ پی سی بی حکام نے عرفان کا موبائل فون قبضے میں لے لیا تاہم اسے معطل نہیں کیا گیا۔ مشکوک سرگرمیوں کے حوالے سے کراچی کے کھلاڑی شاہ زیب حسن سے بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے۔جبکہ عماد وسیم کا نام بھی مشکوک سرگرمیوں کے حوالے سے سامنے آرہا ہے۔پی ایس ایل کے پہلے آڈیشن کے دوران بھارتی کرکٹر روی بھوپارہ نے ایک بیان میں جواریوں کے سرگرم ہونے کا بیان دیا تھا۔پی سی بی کے بعض حکام کے نام بھی مشکوک سرگرمیوں کے حوالے سے سامنے آئے ہیں جبکہ دبئی میں ہونے والی مشکوک سرگرمیوں کے تانے بانے بھارتی جواریوں اور عالمی نیٹ ورک تک پہنچ رہے ہیں۔ اس تمام سازش کے پیچھے بھارتی ذہن کار فرما ہانے کے ثبوت سامنے آ رہے ہیں اور اس تمام کا مقصد پاکستان‘ پاکستان کرکٹ اور پی ایس ایل کا امیج متاثر کرنا ہے۔

Related posts